Ahmad Faraz Ghazal in urdu |&Love and Sad Ghazal collection |

Ahmad Faraz Ghazal;  Ahmed Faraz is one of the famous poets of Pakistan. His name is Ahmed Faraz who has a prominent place in the world of poetry. He needs no introduction. He entered the world of poetry and made a splash of poetry. He is present in the hearts of the people.

Ahmad Faraz Ghazal,Ahmad Faraz Ghazal Suna hai log, Ahmad Faraz Ghazal Suna hai log use,Ahmad Faraz sheer,Faiz Ahmad Faiz ghazal, Ahmad Faraz nazm, we have latest collection of Ahmad Faraz ghazal & download from here share with friends 

click  Faiz Ahmad Faiz poetry

 

faraz image

ahmad faraz ghazal

(1).اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں
Ab Ky Hum Bichre To Shyad Kabhi Khuwabo Mai Mily 

 

اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں
جس طرح سوکھے ہوئے پھول کتابوں میں ملیں

 

ڈھونڈ اجڑے ہوئے لوگوں میں وفا کے موتی
یہ خزانے تجھے ممکن ہے خرابوں میں ملیں

 

غم دنیا بھی غم یار میں شامل کر لو
نشہ بڑھتا ہے شرابیں جو شرابوں میں ملیں

 

تو خدا ہے نہ مرا عشق فرشتوں جیسا

دونوں انساں ہیں تو کیوں اتنے حجابوں میں ملیں

 

آج ہم دار پہ کھینچے گئے جن باتوں پر
کیا عجب کل وہ زمانے کو نصابوں میں ملیں

 

اب نہ وہ میں نہ وہ تو ہے نہ وہ ماضی ہے فرازؔ
جیسے دو شخص تمنا کے سرابوں میں ملیں

———————————————————————————————————

 (2).ابھی کچھ اور کرشمے غزل کے دیکھتے ہیں
Abi Kuch Or Krixhmy Ghazal Ky Dakhty Hai 

 

ابھی کچھ اور کرشمے غزل کے دیکھتے ہیں
فرازؔ اب ذرا لہجہ بدل کے دیکھتے ہیں

 

جدائیاں تو مقدر ہیں پھر بھی جان سفر
کچھ اور دور ذرا ساتھ چل کے دیکھتے ہیں

 

رہ وفا میں حریف خرام کوئی تو ہو
سو اپنے آپ سے آگے نکل کے دیکھتے ہیں

 

تو سامنے ہے تو پھر کیوں یقیں نہیں آتا
یہ بار بار جو آنکھوں کو مل کے دیکھتے ہیں

 

یہ کون لوگ ہیں موجود تیری محفل میں
جو لالچوں سے تجھے مجھ کو جل کے دیکھتے ہیں

 

یہ قرب کیا ہے کہ یک جاں ہوئے نہ دور رہے
ہزار ایک ہی قالب میں ڈھل کے دیکھتے ہیں

 

نہ تجھ کو مات ہوئی ہے نہ مجھ کو مات ہوئی
سو اب کے دونوں ہی چالیں بدل کے دیکھتے ہیں

 

یہ کون ہے سر ساحل کہ ڈوبنے والے
سمندروں کی تہوں سے اچھل کے دیکھتے ہیں

 

ابھی تلک تو نہ کندن ہوئے نہ راکھ ہوئے
ہم اپنی آگ میں ہر روز جل کے دیکھتے ہیں

 

بہت دنوں سے نہیں ہے کچھ اس کی خیر خبر
چلو فرازؔ کوئے یار چل کے دیکھتے ہیں

—————————————————————————————————————

(3)-منتظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا
Muntzar Kab SY Thyrery Tri Taqrer Ka

منتظر کب سے تحیر ہے تری تقریر کا
بات کر تجھ پر گماں ہونے لگا تصویر کا

 

رات کیا سوئے کہ باقی عمر کی نیند اڑ گئی
خواب کیا دیکھا کہ دھڑکا لگ گیا تعبیر کا

 

کیسے پایا تھا تجھے پھر کس طرح کھویا تجھے
مجھ سا منکر بھی تو قائل ہو گیا تقدیر کا

 

جس طرح بادل کا سایہ پیاس بھڑکاتا رہے
میں نے یہ عالم بھی دیکھا ہے تری تصویر کا

 

جانے کس عالم میں تو بچھڑا کہ ہے تیرے بغیر
آج تک ہر نقش فریادی مری تحریر کا

 

عشق میں سر پھوڑنا بھی کیا کہ یہ بے مہر لوگ
جوئے خوں کو نام دے دیتے ہیں جوئے شیر کا

 

جس کو بھی چاہا اسے شدت سے چاہا ہے فرازؔ
سلسلہ ٹوٹا نہیں ہے درد کی زنجیر کا

 

—————————————————————————————————————

(4)-اپنی ہی آواز کو بے شک کان میں رکھنا
Apni He Awaz Ko By Xhak Kan MAi Rakhna

 

اپنی ہی آواز کو بے شک کان میں رکھنا
لیکن شہر کی خاموشی بھی دھیان میں رکھنا

 

میرے جھوٹ کو کھولو بھی اور تولو بھی تم
لیکن اپنے سچ کو بھی میزان میں رکھنا

کل تاریخ یقیناً خود کو دہرائے گی
آج کے اک اک منظر کو پہچان میں رکھنا

بزم میں یاروں کی شمشیر لہو میں تر ہے
رزم میں لیکن تلوار کو میان میں رکھنا

آج تو اے دل ترک تعلق پر تم خوش ہو
کل کے پچھتاوے کو بھی امکان میں رکھنا

اس دریا سے آگے ایک سمندر بھی ہے
اور وہ بے ساحل ہے یہ بھی دھیان میں رکھنا

اس موسم میں گل دانوں کی رسم کہاں ہے
لوگو اب پھولوں کو آتش دان میں رکھنا

—————————————————————————————————————

(5)- مزاج ہم سے زیادہ جدا نہ تھا اس کا
Mazag Hum Sy Zyada Juda Na Tha Is Ka

 

مزاج ہم سے زیادہ جدا نہ تھا اس کا
جب اپنے طور یہی تھے تو کیا گلہ اس کا

 

وہ اپنے زعم میں تھا بے خبر رہا مجھ سے
اسے گماں بھی نہیں میں نہیں رہا اس کا

 

وہ برق رو تھا مگر وہ گیا کہاں جانے
اب انتظار کریں گے شکستہ پا اس کا

 

چلو یہ سیل بلا خیز ہی بنے اپنا
سفینہ اس کا خدا اس کا ناخدا اس کا

 

یہ اہل درد بھی کس کی دہائی دیتے ہیں
وہ چپ بھی ہو تو زمانہ ہے ہم نوا اس کا

 

ہمیں نے ترک تعلق میں پہل کی کہ فرازؔ
وہ چاہتا تھا مگر حوصلہ نہ تھا اس کا


سنا ہے لوگ اسے آنکھ بھر کی دیکھ تے ہے
Suna Hai Log Use Aankh Bhar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Log Use Aankh Bhar Ke Dekhte Hain
So Ukse Shehar Main Kuch Din Thehar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Rabt Hai Usko Khrab Halon Se
So Apne Ap Ko Barbad Kar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Dard Ki Gahak Hai Chashm E Naaz Uski
So Hum Bhi Uski Gali Se Guzar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Usko Bhi Hai Shair O Shayari Se Shaghaf
So Hum Bhi Mojze Apne Hunar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Bole To Baton Se Phool Jharte Hain
Ye Baat Hai To Chalo Bat Kar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Rat Use Chand Takta Rehta Hai
Sitare Baam E Falak Se Utar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Hashar Hain Uski Ghazaal Si Aankhain
Suna Hai Hiran Usko Dasht Bhar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Din Ko Use Titliyan Stati Hain
Suna Hai Rat Ko Jugnon Thehar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Rat Se Barh Kar Hai Kaklain Uski
Suna Hai Sham Ko Saye Thehar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Uski Siyah Chashmagi Qiyamat Hai
So Usko Surma Faroosh Aah Bhar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Uske Labon Se Ghulab Jalte Hain
So Hum Bahar Pe Ilzam Dhar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Aina Tamasil Hai Jabeen Uski
Jo Sad Dil Hain Use Ban Sanwar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Jab Se Hamail Hain Uski Garadan Main
Mizaj Or He Lal Wa Gohar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Uske Badan Ki Tarash Aisi Hai
Ke Phool Apni Qabain Katar Ke Dekhte Hain

 

Bas Aik Nigaha Se Lut’ta Hai Kafla Dil Ka
So Rehrwan E Tamana Bhi Dar Ke Dekhte Hain

 

Suna Hai Uske Shabstan Se Mutsal Hai Beshit
Makeen Udhar Ke Jalwe Bhi Idhar Dekhte Hain

 

Ruke To Grdshain Uska Tawaf Karti Hain
Chale To Use Zamane Thehar Ke Dekhte Hain

 

Kise Naseeb Ke Be Perahan Use Dekhe
Kabhi Kabhi Dar O Diwar Ghar Ke Dekhte Hain

 

Kahaniyan He Sahi Sab Mubalghe He Sahi
Agar Wo Khwab Hai Tabeer Kar Ke Dekhte Hain

 

Ab Uske Shehar Main Therain Ke Kooch Kar Jaien
“FARAZ” Aao Sitare Safar Ke Dekhte Hain

 

about ahmad faraz short intorduction 

Ahmad Faraz was born on January 12, 1931, in the area of ​​Kohat. His real name was Syed Ahmad Shah. When he stepped into poetry, he adopted the Faraz with the name, after which he became popularly known as Ahmad Faraz. During his studies, writers were selected in Radio Pakistan. When his first poetry collection was published alone, he was in BA. Faraz separated from Radio Pakistan after completing his MA in Urdu and Persian. In 1998, he has awarded the national award baraq Gorak award 1998. Some of his poetry was famous all over the world. Faraz Sahib was as famous in Pakistan as he was in India.

2 Comments

  1. Pingback: Ahmed faraz Poetry & Faraz Two Line Urdu Shayari sms

  2. Pingback: Ahmad nadeem qasmi Ghazal & nazam in urdu (poetryus.com )

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*