Ahmad Nadeem Qasmi Ghazal & nazam in urdu (poetryus.com )

Ahmad Nadeem Qasmi Ghazal is available in Urdu and English. He was a famous Shayari. we have the latest kinds of Ghazal Ahmad Nadeem qasmi . Ahmad Nadeem qasmi ghazal collection is available on this site. our team daily updates the latest and nazam & ghazal of Ahmad Nadeem qasmi . u can download a more list of Ahmad Nadeem qasmi ghazal .best of Ahmad Nadeem qasmi ghazal and poetry for people who love Ahmad Nadeem qasmi. click this link for the latest collection of Ahmad Faraz Ghazal

 

 

انداز ہو بہو تری آواز پا کا تھا

 

انداز ہو بہو تری آواز پا کا تھا
دیکھا نکل کے گھر سے تو جھونکا ہوا کا تھا

 

اس حسن اتفاق پہ لٹ کر بھی شاد ہوں
تیری رضا جو تھی وہ تقاضا وفا کا تھا

 

دل راکھ ہو چکا تو چمک اور بڑھ گئی
یہ تیری یاد تھی کہ عمل کیمیا کا تھا

 

اس رشتۂ لطیف کے اسرار کیا کھلیں
تو سامنے تھا اور تصور خدا کا تھا

 

چھپ چھپ کے روؤں اور سر انجمن ہنسوں
مجھ کو یہ مشورہ مرے درد آشنا کا تھا

 

اٹھا عجب تضاد سے انسان کا خمیر
عادی فنا کا تھا تو پجاری بقا کا تھا

 

ٹوٹا تو کتنے آئنہ خانوں پہ زد پڑی
اٹکا ہوا گلے میں جو پتھر صدا کا تھا

 

حیران ہوں کہ وار سے کیسے بچا ندیمؔ
وہ شخص تو غریب و غیور انتہا کا تھا

———————————————————————————-

اب تو شہروں سے خبر آتی ہے دیوانوں کی

اب تو شہروں سے خبر آتی ہے دیوانوں کی
کوئی پہچان ہی باقی نہیں ویرانوں کی

 

اپنی پوشاک سے ہشیار کہ خدام قدیم
دھجیاں مانگتے ہیں اپنے گریبانوں کی

 

صنعتیں پھیلتی جاتی ہیں مگر اس کے ساتھ
سرحدیں ٹوٹتی جاتی ہیں گلستانوں کی

 

دل میں وہ زخم کھلے ہیں کہ چمن کیا شے ہے
گھر میں بارات سی اتری ہوئی گل دانوں کی

 

ان کو کیا فکر کہ میں پار لگا یا ڈوبا
بحث کرتے رہے ساحل پہ جو طوفانوں کی

 

تیری رحمت تو مسلم ہے مگر یہ تو بتا
کون بجلی کو خبر دیتا ہے کاشانوں کی

 

مقبرے بنتے ہیں زندوں کے مکانوں سے بلند
کس قدر اوج پہ تکریم ہے انسانوں کی

 

ایک اک یاد کے ہاتھوں پہ چراغوں بھرے طشت
کعبۂ دل کی فضا ہے کہ صنم خانوں کی

==================================================================

گُل تیرا رنگ چُرا لائے ہیں,…. گُلزاروں میں

 

گُل تیرا رنگ چُرا لائے ہیں,…. گُلزاروں میں

جل رہا ہوں بھری برسات کی بوچھاڑوں میں

 

مجھ سے کترا کے نکل جا مگر اے جانِ جہاں
دِل کی لو دیکھ رہا ہوں تیرے رُخساروں میں

 

حُسنِ بیگانہ سے،…….احساسِ جمال اچھا ہے
غنچے کِھلتے ہیں تو بِک جاتے ہیں بازاروں میں

 

ذکر کرتے ہیں تیرا مجھ سے، با عنوانِ جفا
چارہ گر پھول پِرو لائے ہیں،.. تلواروں میں

 

زخم چُھپ سکتے ہیں لیکن، مجھے فن کی سوگندھ
غم کی دولت بھی ہے شامل،. میرے شاہکاروں میں

 

مجھ کو نفرت سے نہیں، پیار سے مصلوب کرو
میں بھی شامل ہوں،. محبت کے گنہگاروں میں

 

رُت بدلتی ہے تو،.. معیار بدل جاتے ہیں
بُلبلیں خار لیے پھرتی ہیں، منقاروں میں

 

چُن لے بازارِ ہُنر سے،.. کوئی بہروپ ندیم
اب تو فنکار بھی شامل ہیں، اداکاروں میں

—————————————————————————————————————

watch ahmad nadeem qasmi ghazal online

جب ترا حکم ملا ترک محبت کر دی

جب ترا حکم ملا ترک محبت کر دی
دل مگر اس پہ وہ دھڑکا کہ قیامت کر دی

 

تجھ سے کس طرح میں اظہار تمنا کرتا
لفظ سوجھا تو معانی نے بغاوت کر دی

 

میں تو سمجھا تھا کہ لوٹ آتے ہیں جانے والے
تو نے جا کر تو جدائی مری قسمت کر دی

 

تجھ کو پوجا ہے کہ اصنام پرستی کی ہے
میں نے وحدت کے مفاہیم کی کثرت کر دی

 

مجھ کو دشمن کے ارادوں پہ بھی پیار آتا ہے
تری الفت نے محبت مری عادت کر دی

 

پوچھ بیٹھا ہوں میں تجھ سے ترے کوچے کا پتہ
تیرے حالات نے کیسی تری صورت کر دی

 

کیا ترا جسم ترے حسن کی حدت میں جلا
راکھ کس نے تری سونے کی سی رنگت کر دی

=================================================================

اپنے ماحول سے تھے قیس کے رشتے کیا کیا

اپنے ماحول سے تھے قیس کے رشتے کیا کیا
دشت میں آج بھی اٹھتے ہیں بگولے کیا کیا

 

عشق معیار وفا کو نہیں کرتا نیلام
ورنہ ادراک نے دکھلائے تھے رستے کیا کیا

 

یہ الگ بات کہ برسے نہیں گرجے تو بہت
ورنہ بادل مرے صحراؤں پہ امڈے کیا کیا

 

آگ بھڑکی تو در و بام ہوئے راکھ کے ڈھیر
اور دیتے رہے احباب دلاسے کیا کیا

 

لوگ اشیا کی طرح بک گئے اشیا کے لیے
سر بازار تماشے نظر آئے کیا کیا

 

لفظ کس شان سے تخلیق ہوا تھا لیکن
اس کا مفہوم بدلتے رہے نقطے کیا کیا

 

اک کرن تک بھی نہ پہنچی مرے باطن میں ندیمؔ
سر افلاک دمکتے رہے تارے کیا کیا

==================================================================

اعجاز ہے یہ تیری پریشاں نظری کا

اعجاز ہے یہ تیری پریشاں نظری کا
الزام نہ دھر عشق پہ شوریدہ سری کا

 

اس وقت مرے کلبۂ غم میں ترا آنا
بھٹکا ہوا جھونکا ہے نسیم سحری کا

 

تجھ سے ترے کوچے کا پتہ پوچھ رہا ہوں
اس وقت یہ عالم ہے مری بے خبری کا

 

یہ فرش ترے رقص سے جو گونج رہا ہے
ہے عرش معلی مری عالی نظری کا

 

کہرے میں تڑپتے ہوئے اے صبح کے تارے
احسان ہے شاعر پہ تری چارہ گری کا

=================================================================

 

Wo Koi Aur Na Tha Chand Khushk Patte The

 

Wo Koi Aur Na Tha Chand Khushk Patte The
Shajar Se Toot Ke Jo Fasl-E-Gul Pe Roye The

 

Abhi Abhi Tumhen Socha To Kuch Na Yaad Aaya
Abhi Abhi To Hum Ek-Dusare Se Bichde The

 

Tumhare Bad Chaman Par Jab Ik Nazar Dali
Kali Kali Mein Khizan Ke Chirag Jalate The

 

Tamam Umr Wafa Ke Gunahgar Rahe
Ye Aur Baat Ki Hum Aadmi To Ache The

 

Shab-E-Khamosh Ko Tanhai Ne Zaban De Di
Pahad Gunjate The Dasht Sansanate The

 

Wo Ek Bar Mare Jin Ko Tha Hayat Se Pyar
Jo Zindagi Se Gurezan The Roz Marate The

 

Naye Khayal Ab Aate Hain Dhal Ke Zahan Mein
Hamare Dil Mein Kabhi Khet Lahlahate The

 

Ye Iratiqa Ka Chalan Hai Ki Har Zamane Mein
Purane Log Naye Aadmi Se Darate The

 

‘Nadeem’ Jo Bhi Mulaqat Thi Adhuri Thi
Ki Ek Chehare Ke Piche Hazar Chehare The

 

About Ahmad Nadeem Qasmi Biography 

Mr. Ahmad Nadeem Qasmi is a famous Urdu writer, novelist, journalist, columnist, great poet, and legendary poet and novelist. Prominent writers associated with the progressive movement were arrested twice for this reason.

Ahmad Nadeem Qasmi Sahib lived a long life. By the age of 90, he has confirmed more than 50 books, if we talk about the early life of Ahmad Nadeem Qasmi.
Ahmad Nadeem Qasmi was born on November 20, 1916, in khushab district of western Punjab.

His real name was Ahmad Shah. He belonged to the Awan community.
Nadeem was his nickname and he was called Qasmi because of his great grandfather Muhammad Qasim. His father was Pir Ghulam Nabi and his mother was Ghulam Bibi. Ahmad Nadeem Qasmi had his early education in the villages.

After the death of his father in 1923, he moved to his uncle Haider Shah. There he found a religious, practical, and poetic atmosphere.BA in 1935
Ahmad Nadeem Qasmi’s early life was full of difficulties in 1935. When he left his native villages and reached Lahore, he had no means of subsistence. Qasmi Sahib’s poetry began in 1931 when Maulana Muhammad Ali Johar passed away.

But his first poem was published on the front page of the daily Siyasat Lahore. It was a great honor for him. Not only that, but Nadeem Ahmed’s poems also continued to be published daily.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*