Ahmed faraz Poetry & Faraz Two Line Urdu Shayari sms

ahmed faraz poetry ; express your feeling with love and sad poetry of Ahmed faraz sahib. he was a famous shayar , mostly people ahmed faraz shayari compare   with faiz ahmed faiz shayari.
Ahmed Faraz, the king of Urdu literature, who made a place in the hearts of the people with his ghazals and poetry. Faraz Ahmed is known all over the world for his poetry. if u love Ahmed faraz poetry so u can share with a friend and social media.

click this link for Ahmed faraz ghazal 

 

ahmed faraz poetry

 

 

ابھی تو جاگ رہے ہیں چراغ راہوں کے
ابھی ہے دور سحر تھوڑی دور ساتھ چلو

Abhi to jaag rahe hain charagh raahon k
Abhi hai door saher thodi door saath chalo

 

ہنسی خوشی سے بچھڑ جا اگر بچھڑنا ہے
یہ ہر مقام پہ کیا سوچتا ہے آخر تو

Hansi khushi se bichar ja agr bicharna hai
Yeh har muqaam pe kya sochta hai akhir tu

 

 

ضبط لازم ہے مگر دکھ ہے قیامت کا فراز
ظالم اب کے بھی نہ رویے گا تو مر جائے گا

Zabt laazim hai magar dukh hai qayamat ka Faraz
Zaalim ab k bhi na roye ga tou mar jaye ga

 

 

دل بھی پاگل ہے کے اس شخص سے وابستہ ہے
جو کسی اور کا ہونے دے نہ اپنا رکھے

Dil bhi pagal hai k us shakhs se wabsta ha
Jo kisi aur ka hone de na apna rakhe

 

دوست بن کر بھی نہیں ساتھ نبھانے والا
وہی انداز ہے ظالم کا زمانے والا

Dost ban kar bhi nahi saath nibhane wala
Wohi andaaz hai zaalim ka zamane wala

 

 

وہ وقت آ گیا ہے کے ساحل کو چھوڑ کر
گہرے سمندروں میں اتر جانا چاہیے

Woh waqat aa gya hai k saahil ko chor kar
Gehray sumandron main utar jana chahie

 

مگر کسی نے ہمیں ہمسفر نہیں جانا
یہ اور بات ہے کے ہم ساتھ ساتھ سب کےگئے

Magar kisi ne hamen hum-safar nahi jaana
Yeh aur baat hai k hum saath saath sab k gaye

 

ہم نے ترک تعلق میں پہل کی فراز
وہ چاہتا تھا مگر حوصلہ نہ تھا اسکا

Hum ne tark e taluq main pehal ki k faraz
Wo chahta tha magar hosla na tha uska

 

مجھ کو خود اپنے آپ سے شرمندگی ہوئی
وہ اس طرح کے تجھ پہ بھروسہ بلا کا تھا

Mujh ko khud apne aap se sharmindgi hoi
Woh is tarah k tujh pe bharosa bala k tha

 

ہم اپنے دل سے ہیں مجبور اور لوگوں کو
ذرا سی بات پر برپا قیامت کرنی ہے

Hum apne dil se hain majboor aur logon ko
Zara c baat par barpa qayamten karni hai

 

اب کے ہم بچھڑے تو شاید کبھی خوابوں میں ملیں
جس طرح سوکھے ہوے پھول کتابوں میں ملیں

Ab k hum bichare to shyd kabhi khawabon main milen
Jis tarah sukhe howe phool kitaabon main milen

 

 

 

ہوا ہے تجھ سے بچھڑنے کے بعد یہ معلوم
کے تو نہیں تھا تیرے ساتھ ایک دنیا تھی

Hua hai tujh se bicharne k baad ye maloom
K tu nahi tha teray saath ek duniya thi

 

اس سے پہلے کے بیوفا ہوجائیں
کیوں نہ اے دوست ہم جدا ہو جائیں

Is se pehle k bewafa ho jayen
Kyun na ay dost hum juda ho jayen

 

جب بھی دل کھول کےروئے ہوں گے
لوگ آرام سےسوئے ہوں گے

Jab bhi dil khol k roye hun ge
Log aaram se soye hun ge

 

 

کسی بیوفا کی خاطر یہ جنون فراز کب تک
جو تمہیں بھلا چکا ہے اسے تم بھی بھول جاؤ

Kisi bewafa ki khaatir ye janoon Faraz kab tak
Jo tumhen bhula chuka hai usy tum b bhool jao

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*