Amjad Islam Amjad Ghazal & Nazam In urdu Poetryus

Posted by
Spread the love

amjad islam amjad ghazals urdu ;  latest collection update shayari urdu amjad islam amjad poetry.  u can download ghazal &nazam  from here. pakistan bigest poet count amjad islam amjad .

here availabe ghazal in urdu font of amjad islam amjad . famous ghazal of amjad islam amjad.clik here more romantic and sad ghazal  of different writer. in which site complete list  of famous poeter like amjad Islam amjad. allama Iqbal poetry , faiz Ahmad faiz ghazal ,  share amjad islam ghazal in Urdu on social media facebook, twitter and Instagram .

Jo DIn THa Ak Musebat To Rat Bhari Thi

جو دن تھا ایک مصیبت تو رات بھاری تھی

 

جو دن تھا ایک مصیبت تو رات بھاری تھی

گزارنی تھی مگر زندگی، گزاری تھی

 

سواد شوق میں ایسے بھی کچھ مقام آئے

نہ مجھ کو اپنی خبر تھی نہ کچھ تمہاری تھی

 

لرزتے ہاتھوں سے دیوار لپٹی جاتی تھی

نہ پوچھ کس طرح تصویر وہ اتاری تھی

 

جو پیار ہم نے کیا تھا وہ کاروبار نہ تھا

نہ تم نے جیتی یہ بازی نہ میں نے ہاری تھی

 

طواف کرتے تھے اس کا بہار کے منظر

جو دل کی سیج پہ اتری عجب سواری تھی

 

تمہارا آنا بھی اچھا نہیں لگا مجھ کو

فسردگی سی عجب آج دل پہ طاری تھی

 

کسی بھی ظلم پہ کوئی بھی کچھ نہ کہتا تھا

نہ جانے کون سی جاں تھی جو اتنی پیاری تھی

 

ہجوم بڑھتا چلا جاتا تھا سر محفل

بڑے رسان سے قاتل کی مشق جاری تھی

 

تماشا دیکھنے والوں کو کون بتلاتا

کہ اس کے بعد انہی میں کسی کی باری تھی

 

وہ اس طرح تھا مرے بازوؤں کے حلقے میں

نہ دل کو چین تھا امجدؔ نہ بے قراری تھی

==================================================================

 

Meri Ratain Teri Yaadon Se saji Rehti Hain

 

Meri Ratain Teri Yaadon Se saji Rehti Hain
Meri Sansain Teri Khushbu Se Basi Rehti Hain

 

Meri Aankhon Mai Tera Sapna Sja Rehta Hai
Haan Mere Dil Main Tera Aks Basa Rehta Hai

 

It Tarah Mere Dil Ke Bahut Pass Ho Tum
Jis Tarah Paas Hi Sheh Rag Ke Khuda Rehta Hai

 

Tum Ko Malom Bhi Shayad Ye Kabi Ho K Na Ho
Mere Aangan Mai Lage Phol Gwahi Dain Gay

 

Mai Ne Arse Se Kisi Phol Ko Dekha Bi Nahi
Tuj Ko Socha Hai Tu Phir Tuj Ko Hi Socha Hai Faqat

 

Tere Swa Ksi Aur Ko Socha Bi Nahi
Tum Ko Malom Bi Shayad Ye Kabi Ho K Na Ho

==================================================================

Hazor Yar Mai Harf Iltja Ky Rakhy Thy 

حضور یار میں حرف التجا کے رکھے تھے

 

 

حضور یار میں حرف التجا کے رکھے تھے

چراغ سامنے جیسے ہوا کے رکھے تھے

 

بس ایک اشک ندامت نے صاف کر ڈالے

وہ سب حساب جو ہم نے اٹھا کے رکھے تھے

 

سموم وقت نے لہجے کو زخم زخم کیا

وگرنہ ہم نے قرینے صبا کے رکھے تھے

 

بکھر رہے تھے سو ہم نے اٹھا لیے خود ہی

گلاب جو تری خاطر سجا کے رکھے تھے

 

ہوا کے پہلے ہی جھونکے سے ہار مان گئے

وہی چراغ جو ہم نے بچا کے رکھے تھے

 

تم ہی نے پاؤں نہ رکھا وگرنہ وصل کی شب

زمیں پہ ہم نے ستارے بچھا کے رکھے تھے

 

مٹا سکی نہ انہیں روز و شب کی بارش بھی

دلوں پہ نقش جو رنگ حنا کے رکھے تھے

 

حصول منزل دنیا کچھ ایسا کام نہ تھا

مگر جو راہ میں پتھر انا کے رکھے تھ

==================================================================

 

Bas Tum Muje Achi Lagti Ho

 

Bas Tum Muje Achi Lagti Ho
Tum Itni Sundar Ho K Nahi

Tumhain Ik Nazar Jo Dekhe Wo
Sudh Budh Bhole Madhosh Rahe

Bas Tum Muje Achi Lagti Ho
Tum Hans Do Tu Mosam Badlain

Tu Jago Tu Dunya Jage
Jilmal Jilmal Manzar Hon Sab

Aur Na Soje Kuch Aage
Bas Tum Ko Dekhain, Dekhte Reh Jayen

Ma’alom Nahi Tum Itni Pyar Ho Ke Nahi
Itni Sundar Ho K Nahi

Bas Tum Muje Achi Lagti Ho

 

==================================================================

Zara Phir Se Kehna By Amjad Islam Amjad

Tay Kesi Ki Sadyon Ki Pyas Aur Pani, Zara Phir Se KehnaBari Dil Ruba Hai Ye Sari Khani, Zara Phir Se Kehna

Kahan Se Chala Tha Judai Ka Saya, Nahi Dekh Paya
Ke Raste Main Aanson Ki Rwani, Zara Phir Se Kehna

Hawa Ye Khabar Tu Sunati Rahe Aur Main Sunta Rhon
Badalne Ko Hai Ab Ye Mosam Khzani, Zara Phir Se Kehna

Mukr Jane Wala Kabi Zindagi Mai Khushi Phir Na Paye
Yunhi Khatam Kar Lain, Chalo Ye Khani, Zara Phir Se Kehna

Smay Ke Samandar Kaha Tu Ne Jo Bi Suna Par Na Samjhe
Jawani Ki Nadi Mai Tha Teez Pani, Zara Phir Se Kehna

 

==================================================================

 

Dam Khusbu Mai Girftar Saba Hai Kab Sy 

دام خوشبو میں گرفتار صبا ہے کب سے

 

دام خوشبو میں گرفتار صبا ہے کب سے

لفظ اظہار کی الجھن میں پڑا ہے کب سے

 

اے کڑی چپ کے در و بام سجانے والے

منتظر کوئی سر کوہ ندا ہے کب سے

 

چاند بھی میری طرح حسن شناسا نکلا

اس کی دیوار پہ حیران کھڑا ہے کب سے

 

بات کرتا ہوں تو لفظوں سے مہک آتی ہے

کوئی انفاس کے پردے میں چھپا ہے کب سے

 

شعبدہ بازی آئینۂ احساس نہ پوچھ

حیرت چشم وہی شوخ قبا ہے کب سے

 

دیکھیے خون کی برسات کہاں ہوتی ہے

شہر پر چھائی ہوئی سرخ گھٹا ہے کب سے

 

کور چشموں کے لیے آئینہ خانہ معلوم

ورنہ ہر ذرہ ترا عکس نما ہے کب سے

 

کھوج میں کس کی بھرا شہر لگا ہے امجدؔ

ڈھونڈتی کس کو سر دشت ہوا ہے کب سے


Spread the love

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*