Azab Shayari / Poetry Urdu & Hindi | Azab Ghazal / Status / Quotes / SMS

Azab Shayari / Poetry Urdu & Hindi | Azab Ghazal / Status / Quotes / SMS

Azab Shayari / Poetry in Urdu text and Hindi is available here. Get a unique collection of daily Azab poetry status image quotes in English. Azab poetry Quotes 2 line SMS from here. We hope you like Azab Shayari in Hindi words message in Hindi, Urdu & English. if you want more Azab quotes in Urdu and Hindi rekhta and poetry in English and go down and click related post.

Azab poetry in Urdu images and Hindi SMS Shayari quotes and status uploaded on Facebook and Instagram. Find Here the Top collection of Urdu and Hindi poets. Our team daily upload all type of Shayari in this site. You can find your favorite poetry on this site and share it with your loved ones. We hope you enjoyed our collection. If you liked Azab shayari in Hindi 2 line Collection, please let us know by commenting below.

azab shayari images

azab shayari images

Tum Pē Bēētē Jō Qayamat Tanhai Ki,
Tum Bhi Kēhtē Phirō Azab, Azab Hai Ishq

 

 

 

 

 

 

 

Gar Kiya Nasēh Nē Hum Kō Qaid Acha Yun Sahi
Yē Junōōn-ē-Ishq Kē Andaz Chutt Jawēngē Kya
گر کیا ناصح نے ہم کو قید اچھا یوں سہی
یہ جنون عشق کے انداز چھٹ جاویں گے کیا
गर किया नासेह ने हम को क़ैद अच्छा यूँ सही
ये जुनून-ए-इश्क़ के अंदाज़ छुट जावेंगे क्या

 

 

 

 

 

Ussēy Pōōchō Azab Rastōn Ka,
Jis Ka Sathi Safar Mēin Bichra Hō

 

 

 

 

Yē Lash-ē-Bē-Kafan ‘Asad’ -ē-Khasta-Jan Ki Hai
Haq Maghfirat Karē Ajab Azad Mard Tha
یہ لاش بے کفن اسدؔ خستہ جاں کی ہے
حق مغفرت کرے عجب آزاد مرد تھا
ये लाश-ए-बे-कफ़न ‘असद’-ए-ख़स्ता-जाँ की है
हक़ मग़्फ़िरत करे अजब आज़ाद मर्द था

 

 

 

Tawajjō Dē Apni Talēēm Pēr, Na Par Ishq Kē Azabōn Mēin,
Aksēr Wōh Lōg Barbad Hōtē Hain Jō Rakhtē Hain Phōōl Kitaabōn Mēin

 

sabar quotes in urdu images

sabar quotes in urdu images

 

Sau Baar Band-ē-Ishq Sē Azad Hum Hōyē
Par Kya Karēn K Dil Hi Adu Hai Faragh Ka
سو بار بند عشق سے آزاد ہم ہوئے
پر کیا کریں کہ دل ہی عدو ہے فراغ کا
सौ बार बंद-ए-इश्क़ से आज़ाद हम हुए
पर क्या करें कि दिल ही अदू है फ़राग़ का

ہر دن کا یہ عذاب سہا جائے گا نہ اب
یوں شہر بے مہر میں رہا جائے گا نہ اب

پھولوں کو جس کے باغباں خود روندتا رہے
ایسا چمن آباد کیا جائے گا نہ اب

خلقت کو لوٹتا ہے امیر شہر یہاں
ہم سے خراج خون دیا جائے گا نہ اب

اپنے لہو سے لکھیں گے تقدیر اپنی ہم
یہ ہاتھ ان کے ہاتھ دیا جائے گا نہ اب

سر کو جھکا دیں پوچھے بنا وجہ قتل کیوں
کہتے ہو تم جو ہم سے کیا جائے گا نہ اب

تم سے وفا نبھائیں گے ہر حال میں امیر
یہ عہد استوار دیا جائے گا نہ اب

وامق وہ جن کے نام سے دنیا دہلتی ہے
سن پائیں گے وہ ایک بھی حرف دعا نہ اب

 

 

گئے موسموں کے عذاب
کچھ مرجھائے ہوئے گلاب
زخم زخم ایک اِک باب
اپنے جیون کا نصاب
ہم نے جھیلے وہ عذاب
جن کی حد ہے نہ حساب
تقدیر میں لکھا تھا چناب
زیست کی ناؤ ہوئی غرقاب
بےرُخی رہے گی کب تک؟
تم کتنا پاؤ گے ثواب ؟
سچ بولنے والے ہار گئے
جھوٹوں نے کر دیا لاجواب
تم پھر ہوش اُڑا بیٹھے؟
کب میں نے اُلٹی ہے نقاب؟
رعنا نے پائیں تعزیریں
دیکھا تم کو پانے کا خواب

 

 

 

 

لہو غریب کا جلتا رہا چراغوں میں
امیر مست رہا جام اور شرابوں میں

شباب لٹتا رہا رات کے اندھیروں میں
سواد آتا رہا ریشمی کبابوں میں

وفاء خلوص، محبت یگانگت ایثار
یہ سارے جذبے چھپے ہیں فقط کتانوں میں

غموں کو ساتھ لیئے پر قدم پہ دکھ جھیلے
تمام عمر گزاری ہے سخت عذابوں میں

فقط غریب کو قربت نہیں عطا کی ہے
رسول بھی کئی دیکھے ہیں بادشاہوں میں

تو میرے دل میں مکیں تھا مجھے خبر بھی نہ تھی
میں تجھ کو ڈھونڈ رہا تھا کہاں سرابوں میں

وہ جنکے ایک اشارے سے بستیاں اچڑیں
وہ تاجور بھی سسکتے تھے قید خانوں میں

وہ جو کہ نیلم و یاقوت سے مرصع تھے
وہ تاج رولتے دیکھے ہیں خانقاہوں میں

جسے میں منبر و محراب میں تلاش کیا
ملا وہ پارساء مجھ کو شراب خا نوں میں

غم حسین کی مجلس میں کل یزید کئی
چھپا کے آئے تھے چہرہ یہاں نقابوں میں

کوئی بھی مد مقابل نہیں ملا سکا
یہ شاہکار تو شامل ہے لاجوابوں میں

خوشی، مسرت و آسائش و سکوں اشہر
سبھی کے لوٹے مزے میں نے ہیں خوابوں میں