Firaq Gorakhpuri Poetry in Urdu & Hindi | Gorakhpuri Shayari, Ghazal

Firaq Gorakhpuri Poetry in Urdu & Hindi | Gorakhpuri Shayari, Ghazal

Firaq Gorakhpuri Poetry in Urdu text and Hindi available. Here u firaq gorakhpuri ghazal for youth in Urdu text. if u like gorakhpuri Shayai, Kavita SMS so u can download and share it with friends and Whatsapp. English Firaq poetry and images thousand plus available.

Read and download our latest collection of Firaq Gorakhpuri poetry with latest images sher shayari. He is a well know Urdu poet popular in both Pakistan and India. Read Ghazals, nazams and Shayari of Firaq Gorakhpuri at poetryus.com. Rekhta android poetry for laptop and mobile copy and share on social media.

 

 

Firaq Gorakhpuri ki shayari in Urdu

 

 

firaq gorakhpuri ghazal in hindi

firaq gorakhpuri ghazal in hindi

 

Kòi samjhē tò ēk baat kahun
Ishq taufēēq hai gunaah nahi

 

Tarq ē mòhabbat karnē walò, kaun aisa jag jēēt liya
Ishq sē pēhlē kē din sòchò kaun bada sukh hòta tha

 

 

Main hòòn, dil hai, tanhayi hai
Tum bhi jò hòtē, achcha hòta

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

 

Ishq mē sach hi ka ròna hai
Jhòòthē nahi tum jhòòthē nahi hum

 

 

Lēnē sē taaj-ò–takht milta hai
Maangē sē bhēēk bhi nahi milti

 

 

Kaun yē lē raha hai angdaayi
Aasmanò kò nēēnd aati hai

 

 

 

Dilòn kò tērē tabassum ki yaad yun aayi
Ki jagmaga uthē jis tarah mandirò mē chiragh

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri ghazal

firaq gorakhpuri ghazal

Ishq Abi Sē Tanha Tanha
Hijar Ki Bhi Ayi Nahi Nòbat

 

 

 

Zara visaal kē baad aaiinē tò dēkh aē dòst
Tērē jamaal ki dòshēēzgi nikhar aayi hai

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

Ik Umēr Kat Gayi Hai Tērē Intēzaar Mēin
Aēsay Bhi Hain Kē Kat Na Saki Jin Sē Aik Raat

 

 

 

Bahut dinò mē muhabbat kò yē hua maalòòm
Jò tērē hijr mē guzri wò raat raat huyi

 

 

Suntē hain ishq naam kē guzrē hain ēk buzurg
Hum lòg bhi faqēēr usi silsilē kē hain

 

 

 

Ab Yaad Ruftagan Ki Bhi Himat Nahi Rahi
Yaaròn Nē Kitni Dòr Bsayi Hain Bastiyan

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

Har liya hai kisi nē sita kò
Zindagi hai ki raam ka banwaas

 

 

 

Ab Tu Un Ki Yaad Bhi Nahi Aati
Kitni Tanha Hò Gyi Tanhiyan

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

firaq gorakhpuri hindi

firaq gorakhpuri hindi

 

Dum nikal jayē magar dil na lagayē kòi
Ishq ki thi yē wasiyat mujhē maalòòm na tha

 

 

Tabiyat apni ghabrati hai jab sunsaan raatò mē
Hum aisē mē tēri yaadòn ki chadar taan lētē hain

 

 

 

Jahan Mēin Thi Bas Ik Afwah Tērē Jalwòn Ki
Chiragh Dēr-ò Haram Jilmalyē Hain Kya Kya

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

 

Humsē kya hò saka mòhabbat mēin
Khair, tumnē tò bēwafayi ki

 

 

 

Muhabbat mē mēri tanhaiyòn kē hain kayi unwaan
Tēra aana tēra milna tēra uthna tēra jaana

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri poetry pdf

firaq gorakhpuri poetry pdf

Main Hun Dil Hai Tanhai Hai
Tum Bhi Hòtē Acha Hòta

 

 

 

Gazal hai ya kòi dēvi khadi hai latt chitkaayē
Yē kisnē gēsu-ē-urdu kò yun sanwara hai

 

 

Kēh Diya Tu Nē Jò Masòòm Tu Ham Hain Masòòm
Kēh Diya Tu Nē Gunah-Gar Gunah-Gar Hain Ham

 

 

 

Kiskò ròta hai umr bhar kòi
Aadmi jald bhòòl jata hai

 

 

Raat bhi, nēēnd bhi, kahaani bhi,
Haay kya chēēz hai jawaani bhi

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri rekhta

firaq gorakhpuri rekhta

Mēin Mudatòn Jiya Hun Kisi Dòst Kē Bēghair
Ab Tum Bhi Sath Chòrnē Kò Kēh Rahē Hò Khair

 

 

 

Kya jaam hai Firaq muhabbat ka jaam bhi
Aab-ē-hayat bhi hai asal ka payam bhi

 

 

 

Na Kòi Wa’ada Na Kòi Yaqēēn Na Kòi Umēēd
Magar Hmain Tu Tēra Intizaar Karna Tha

 

 

 

Bahut pēhlē sē kadmò ki aahat jaan lētē hai
Tujhē aē zindagi hum dòòr sē pēhchan lētē hai

 

Firaq Gorakhpuri Two Line Shayari

 

 

firaq gorakhpuri shayari in hindi pdf

firaq gorakhpuri shayari in hindi pdf

 

Suntay Hain Ishhq Naam Kē Guzray Hain Ik Buzurag
Hum Lòg Bhi Faqēēr Isi Silsilay Kē Hain

 

 

 

Hazaar baar zamana idhar sē guzra hai,
Nayi nayi si hai kuch tēri rēhguzar phir bhi

 

 

 

Ayē thē may-khaanē mēin hastē khēltē ‘Firaq’
Jab pēē chukē sharaab tòh sanjida hò gyē

 

 

Sitaròn sē ulajhta ja raha hòòn,
shab-ē-furqat bahut ghabra raha hòòn,
Tērē gham kò bhi kuch bēhla raha hòòn,
jahan kò bhi samajhta jaa raha hòòn.

 

 

Yēh maana zindagi hai chaar din ki,
Bahut hòtē hai yaar chaar din bhi

 

 

Tum mukhatib bhi hò karēēb bhi,
Tum kò dēkhē ki tumsē baat karē

 

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri shayari rekhta

firaq gorakhpuri shayari rekhta

Kahan ka wasal tanhai nē shayad bhais badla hai
Tērē dam bhar kē mil janē kò hum bhi kya samajtē hain

 

 

 

 

Kòi Aaya Nah Aayē Ga Lēkin
Kya Karēn Gar Nah Intēzaar Karēn

 

Firaq Gorakhpuri Shayari in Hindi

 

firaq gorakhpuri two line shayari

firaq gorakhpuri two line shayari

 

Zabt kijiyē tòh dil hai angaara,
Aur agar ròiyē tòh hai paani

 

 

 

Bòhat Pēhlay Sē In Qadmòn Ki Aahat Jaan Lētay Hain
Tujhy Aē Zindagi Hum Daur Sē Pēhchan Lētay Hain

 

 

 

Aē sòj-ē-ishq tu nē mujhē kya bana diya
Mēri har ēk saans munajat hò gayi

 

 

Kòi Samjhay Tò Aik Baat Kahòòn
Ishhq Tòfēq Hai Gunah Nahi

 

 

 

Saans lēti hai wò zamēēn firaq,
Jis par wò naaz sē guzartē hai

 

 

 

 

Aik Muddat Sē Tri Yaad Bhi Aayi Nah Hamēin
Aur Hum Bhòòl Gayē Hòn Tujhē Aisa Bhi Nahi

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

Garaz ki kaat diyē zindagi kē din aē dòst,
Wò tēri yaad mēin hò ya tujhē bhulanē mēin

 

 

Husn yahi hai ishq yahi hai
Dhòkē dē lē, dhòkē kha lē

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

 

 

Isi Khandar Mēin Kahin Kuch Diyē Hain Tòtē Hòyē
Inhēin Sē Kam Chalaò Bari Udas Hai Raat

 

 

 

Gharz Kē Kaat Diyē Zindagi Kē Din Aē Dòst
Wòh Tēri Yaad Mēin Hòn Ya Tujhē Bhulanē Mēin

 

 

Firaq Gorakhpuri Ghazal

 

 

firaq gorakhpuri, selected poetry

firaq gorakhpuri, selected poetry

مجھ کو مارا ہے ہر اک درد و دوا سے پہلے
دی سزا عشق نے ہر جرم و خطا سے پہلے

آتش عشق بھڑکتی ہے ہوا سے پہلے
ہونٹ جلتے ہیں محبت میں دعا سے پہلے

فتنے برپا ہوئے ہر غنچۂ سربستہ سے
کھل گیا راز چمن چاک قبا سے پہلے

چال ہے بادۂ ہستی کا چھلکتا ہوا جام
ہم کہاں تھے ترے نقش کف پا سے پہلے

اب کمی کیا ہے ترے بے سر و سامانوں کو
کچھ نہ تھا تیری قسم ترک وفا سے پہلے

عشق بے باک کو دعوے تھے بہت خلوت میں
کھو دیا سارا بھرم شرم و حیا سے پہلے

خود بخود چاک ہوئے پیرہن لالہ و گل
چل گئی کون ہوا باد صبا سے پہلے

ہم سفر راہ عدم میں نہ ہو تاروں بھری رات
ہم پہنچ جائیں گے اس آبلہ پا سے پہلے

پردۂ شرم میں صد برق تبسم کے نثار
ہوش جاتے رہے نیرنگ حیا سے پہلے

موت کے نام سے ڈرتے تھے ہم اے شوق حیات
تو نے تو مار ہی ڈالا تھا قضا سے پہلے

بے تکلف بھی ترا حسن خود آرا تھا کبھی
اک ادا اور بھی تھی حسن ادا سے پہلے

غفلتیں ہستئ فانی کی بتا دیں گی تجھے
جو مرا حال تھا احساس فنا سے پہلے

ہم انہیں پا کے فراقؔ اور بھی کچھ کھوئے گئے
یہ تکلف تو نہ تھے عہد وفا سے پہلے

 

 

ستاروں سے الجھتا جا رہا ہوں
شب فرقت بہت گھبرا رہا ہوں

ترے غم کو بھی کچھ بہلا رہا ہوں
جہاں کو بھی سمجھتا جا رہا ہوں

یقیں یہ ہے حقیقت کھل رہی ہے
گماں یہ ہے کہ دھوکے کھا رہا ہوں

اگر ممکن ہو لے لے اپنی آہٹ
خبر دو حسن کو میں آ رہا ہوں

حدیں حسن و محبت کی ملا کر
قیامت پر قیامت ڈھا رہا ہوں

خبر ہے تجھ کو اے ضبط محبت
ترے ہاتھوں میں لٹتا جا رہا ہوں

اثر بھی لے رہا ہوں تیری چپ کا
تجھے قائل بھی کرتا جا رہا ہوں

بھرم تیرے ستم کا کھل چکا ہے
میں تجھ سے آج کیوں شرما رہا ہوں

انہیں میں راز ہیں گلباریوں کے
میں جو چنگاریاں برسا رہا ہوں

جو ان معصوم آنکھوں نے دیے تھے
وہ دھوکے آج تک میں کھا رہا ہوں

ترے پہلو میں کیوں ہوتا ہے محسوس
کہ تجھ سے دور ہوتا جا رہا ہوں

حد‌‌ جور‌ و کرم سے بڑھ چلا حسن
نگاہ یار کو یاد آ رہا ہوں

جو الجھی تھی کبھی آدم کے ہاتھوں
وہ گتھی آج تک سلجھا رہا ہوں

محبت اب محبت ہو چلی ہے
تجھے کچھ بھولتا سا جا رہا ہوں

اجل بھی جن کو سن کر جھومتی ہے
وہ نغمے زندگی کے گا رہا ہوں

یہ سناٹا ہے میرے پاؤں کی چاپ
فراقؔ اپنی کچھ آہٹ پا رہا ہوں

 

 

جہان غنچۂ دل کا فقط چٹکنا تھا
اسی کی بوئے پریشاں وجود دنیا تھا

یہ کہہ کے کل کوئی بے اختیار روتا تھا
وہ اک نگاہ سہی کیوں کسی کو دیکھا تھا

طنابیں کوچۂ قاتل کی کھنچتی جاتی تھیں
شہید تیغ ادا میں بھی زور کتنا تھا

بس اک جھلک نظر آئی اڑے کلیم کے ہوش
بس اک نگاہ ہوئی خاک طور سینا تھا

ہر اک کے ہاتھ فقط غفلتیں تھیں ہوش نما
کہ اپنے آپ سے بیگانہ وار جینا تھا

یہی ہوا کہ فریب امید و یاس مٹے
وہ پا گئے ترے ہاتھوں ہمیں جو پانا تھا

چمن میں غنچۂ گل کھلکھلا کے مرجھائے
یہی وہ تھے جنہیں ہنس ہنس کے جان دینا تھا

نگاہ مہر میں جس کی ہیں صد پیام فنا
اسی کا عالم ایجاد و ناز بے جا تھا

جہاں تو جلوہ نما تھا لرزتی تھی دنیا
ترے جمال سے کیسا جلال پیدا تھا

حیات و مرگ کے کچھ راز کھل گئے ہوں گے
فسانۂ شب غم ورنہ دوستو کیا تھا

شب عدم کا فسانہ گداز شمع حیات
سوائے کیف فنا میرا ماجرا کیا تھا

کچھ ایسی بات نہ تھی تیرا دور ہو جانا
یہ اور بات کہ رہ رہ کے درد اٹھتا تھا

نہ پوچھ سود و زیاں کاروبار الفت کے
وگرنہ یوں تو نہ پانا تھا کچھ نہ کھوتا تھا

لگاوٹیں وہ ترے حسن بے نیاز کی آہ
میں تیری بزم سے جب ناامید اٹھا تھا

تجھے ہم اے دل درد آشنا کہاں ڈھونڈیں
ہم اپنے ہوش میں کب تھے کوئی جب اٹھا تھا

عدم کا راز صدائے شکست ساز حیات
حجاب زیست بھی کتنا لطیف پردا تھا

یہ اضطراب و سکوں بھی تھی اک فریب حیات
کہ اپنے حال سے بیگانہ وار جینا تھا

کہاں پہ چوک ہوئی تیرے بے قراروں سے
زمانہ دوسری کروٹ بدلنے والا تھا

یہ کوئی یاد ہے یہ بھی ہے کوئی محویت
ترے خیال میں تجھ کو بھی بھول جانا تھا

کہاں کی چوٹ ابھر آئی حسن تاباں میں
دم نظارہ وہ رخ درد سا چمکتا تھا

نہ پوچھ رمز و کنایات چشم ساقی کے
بس ایک حشر خموش انجمن میں برپا تھا

چمن چمن تھی گل داغ عشق سے ہستی
اسی کی نکہت برباد کا زمانہ تھا

وہ تھا مرا دل خوں گشتہ جس کے مٹنے سے
بہار باغ جناں تھی وجود دنیا تھا

قسم ہے بادہ کشو چشم مست ساقی کی
بتاؤ ہاتھ سے کیا جام مے سنبھلتا تھا

وصال اس سے میں چاہوں کہاں یہ دل میرا
یہ رو رہا ہوں کہ کیوں اس کو میں نے دیکھا تھا

امید یاس بنی یاس پھر امید بنی
اس اک نظر میں فریب نگاہ کتنا تھا

یہ سوز و ساز نہاں تھا وہ سوز و ساز عیاں
وصال و ہجر میں بس فرق تھا تو اتنا تھا

شکست ساز چمن تھی بہار لالہ و گل
خزاں مچلتی تھی غنچہ جہاں چٹکتا تھا

ہر ایک سانس ہے تجدید یاد ایامے
گزر گیا وہ زمانہ جسے گزرنا تھا

نہ کوئی وعدہ نہ کوئی یقیں نہ کوئی امید
مگر ہمیں تو ترا انتظار کرنا تھا

کسی کے صبر نے بے صبر دیا سب کو
فراقؔ نزع میں کروٹ کوئی بدلتا تھا

 

 

بہت پہلے سے ان قدموں کی آہٹ جان لیتے ہیں
تجھے اے زندگی ہم دور سے پہچان لیتے ہیں

مری نظریں بھی ایسے قاتلوں کا جان و ایماں ہیں
نگاہیں ملتے ہی جو جان اور ایمان لیتے ہیں

جسے کہتی ہے دنیا کامیابی وائے نادانی
اسے کن قیمتوں پر کامیاب انسان لیتے ہیں

نگاہ بادہ گوں یوں تو تری باتوں کا کیا کہنا
تری ہر بات لیکن احتیاطاً چھان لیتے ہیں

طبیعت اپنی گھبراتی ہے جب سنسان راتوں میں
ہم ایسے میں تری یادوں کی چادر تان لیتے ہیں

خود اپنا فیصلہ بھی عشق میں کافی نہیں ہوتا
اسے بھی کیسے کر گزریں جو دل میں ٹھان لیتے ہیں

حیات عشق کا اک اک نفس جام شہادت ہے
وہ جان ناز برداراں کوئی آسان لیتے ہیں

ہم آہنگی میں بھی اک چاشنی ہے اختلافوں کی
مری باتیں بعنوان دگر وہ مان لیتے ہیں

تری مقبولیت کی وجہ واحد تیری رمزیت
کہ اس کو مانتے ہی کب ہیں جس کو جان لیتے ہیں

اب اس کو کفر مانیں یا بلندیٔ نظر جانیں
خدائے دو جہاں کو دے کے ہم انسان لیتے ہیں

جسے صورت بتاتے ہیں پتہ دیتی ہے سیرت کا
عبارت دیکھ کر جس طرح معنی جان لیتے ہیں

تجھے گھاٹا نہ ہونے دیں گے کاروبار الفت میں
ہم اپنے سر ترا اے دوست ہر احسان لیتے ہیں

ہماری ہر نظر تجھ سے نئی سوگندھ کھاتی ہے
تو تیری ہر نظر سے ہم نیا پیمان لیتے ہیں

رفیق زندگی تھی اب انیس وقت آخر ہے
ترا اے موت ہم یہ دوسرا احسان لیتے ہیں

زمانہ واردات قلب سننے کو ترستا ہے
اسی سے تو سر آنکھوں پر مرا دیوان لیتے ہیں

فراقؔ اکثر بدل کر بھیس ملتا ہے کوئی کافر
کبھی ہم جان لیتے ہیں کبھی پہچان لیتے ہیں

 

 

دور آغاز جفا دل کا سہارا نکلا
حوصلہ کچھ نہ ہمارا نہ تمہارا نکلا

تیرا نام آتے ہی سکتے کا تھا عالم مجھ پر
جانے کس طرح یہ مذکور دوبارا نکلا

ہوش جاتا ہے جگر جاتا ہے دل جاتا ہے
پردے ہی پردے میں کیا تیرا اشارا نکلا

ہے ترے کشف و کرامات کی دنیا قائل
تجھ سے اے دل نہ مگر کام ہمارا نکلا

کتنے سفاک سر قتل گہہ عالم تھے
لاکھوں میں بس وہی اللہ کا پیارا نکلا

عبرت انگیز ہے کیا اس کی جواں مرگی بھی
ہائے وہ دل جو ہمارا نہ تمہارا نکلا

عشق کی لو سے فرشتوں کے بھی پر جلتے ہیں
رشک خورشید قیامت یہ شرارا نکلا

سر بہ سر بے سر و ساماں جسے سمجھے تھے وہ دل
رشک جمشید و کے و خسرو و دارا نکلا

عقل کی لو سے فرشتوں کے بھی پر جلتے ہیں
رشک خورشید قیامت یہ شرارا نکلا

رونے والے ہوئے چپ ہجر کی دنیا بدلی
شمع بے نور ہوئی صبح کا تارا نکلا

انگلیاں اٹھیں فراقؔ وطن آوارہ پر
آج جس سمت سے وہ درد کا مارا نکلا

 

 

آج بھی قافلۂ عشق رواں ہے کہ جو تھا
وہی میل اور وہی سنگ نشاں ہے کہ جو تھا

پھر ترا غم وہی رسوائے جہاں ہے کہ جو تھا
پھر فسانہ بحدیث دگراں ہے کہ جو تھا

منزلیں گرد کے مانند اڑی جاتی ہیں
وہی انداز جہان گزراں ہے کہ جو تھا

ظلمت و نور میں کچھ بھی نہ محبت کو ملا
آج تک ایک دھندلکے کا سماں ہے کہ جو تھا

یوں تو اس دور میں بے کیف سی ہے بزم حیات
ایک ہنگامہ سر رطل گراں ہے کہ جو تھا

لاکھ کر جور و ستم لاکھ کر احسان و کرم
تجھ پہ اے دوست وہی وہم و گماں ہے کہ جو تھا

آج پھر عشق دو عالم سے جدا ہوتا ہے
آستینوں میں لیے کون و مکاں ہے کہ جو تھا

عشق افسردہ نہیں آج بھی افسردہ بہت
وہی کم کم اثر سوز نہاں ہے کہ جو تھا

نظر آ جاتے ہیں تم کو تو بہت نازک بال
دل مرا کیا وہی اے شیشہ گراں ہے کہ جو تھا

جان دے بیٹھے تھے اک بار ہوس والے بھی
پھر وہی مرحلۂ سود و زیاں ہے کہ جو تھا

آج بھی صید گہ عشق میں حسن سفاک
لیے ابرو کی لچکتی سی کماں ہے کہ جو تھا

پھر تری چشم سخن سنج نے چھیڑی کوئی بات
وہی جادو ہے وہی حسن بیاں ہے کہ جو تھا

رات بھر حسن پر آئے بھی گئے سو سو رنگ
شام سے عشق ابھی تک نگراں ہے کہ جو تھا

جو بھی کر جور و ستم جو بھی کر احسان و کرم
تجھ پہ اے دوست وہی وہم و گماں ہے کہ جو تھا

آنکھ جھپکی کہ ادھر ختم ہوا روز وصال
پھر بھی اس دن پہ قیامت کا گماں ہے کہ جو تھا

قرب ہی کم ہے نہ دوری ہی زیادہ لیکن
آج وہ ربط کا احساس کہاں ہے کہ جو تھا

تیرہ بختی نہیں جاتی دل سوزاں کی فراقؔ
شمع کے سر پہ وہی آج دھواں ہے کہ جو تھا

 

 

Firaq Gorakhpuri Biography;

Faraq Gorakhpuri was born on August 28, 1896.You were a writer, writer, critic and poet.He was one of the foremost 20 century Urdu language poets.His real name was Raghupati Sahay. In modern poetry, if you look at the name of the firag,The effect of firag on today’s poetry can be easily felt his position is very high.He had a great personality.There was no one in his mind to match him. He was also interested in international literature. Romanticism in criticism.Among his contemporaries are poets like Allama Iqbal Faiz Ahmad Faiz Kefi Azmi Chingizi Jagar Murad Abadi and Sahir Ludhianvi.Despite the presence of such great personalities, he had mastered the art of poetry at an early age.Vacant PCSIRS was selected for the Indian Civil Service. But he resigned in protest of Gandhiji’s non-cooperation movement, for which he had to go to jail.After that, English language elections were held at Allahabad University. From here, the world wanted to shine like the sun in the sky of poetry and literature, but the contemporaries had to believe that there is a difference between the poetry of Firag and other poets.There is a uniqueness in him due to which he established himself as a poet.Her husband’s book Gul Naghma also came to light at the same time.

He was awarded the highest quality literary award of India and was also the producer of All India Radio.He compiled more than a dozen volumes of Urdu poetry and more than half a dozen volumes of Urdu prose and wrote several volumes on Hindi literary genres as well as four books on English literature and culture.firag passed away on March 3, 1982 at the age of 85 in New Delhi after a long illness. The body was taken to Allahabad where it was cremated at the confluence of Ganga and Jumna rivers.If we talk about Firag Gorakhpuri’s songs, neither Gul Rana nor Naat Ruh found life before Pakistan.

The rewards they receive, so to speak
1960 – Sahitya Akademi Award in Urdu
1968 – Padma Bhushan
1968 – Soviet Land Nehru Award
1969 – Jnanpith Award (First Jnanpith Award for Urdu literature)
1970 – Sahitya Akademi Fellowship
1981 – Ghalib Academy Award