Connect with us

Urdu Poets

Mirza Ghalib Shayari in Urdu | Ghalib Poetry love 2 line Sms | Best Ghalib |

mirza ghalib best poetry

Get Mirza Ghalib Shayari in Urdu 2 line SMS from here. Mirza Ghalib’s best poetry with images download and share with friends. Ghalib poetry on life and Urdu text copy and paste.

Mirza Ghalib Shayari in Urdu pdf download lots of collections from here. we hope you like Ghalib Shayari’s quotes. if you want Ghalib Shayari in Urdu and Hindi go down and share on Facebook and Instagram.

 

Mirza ghalib shayari in urdu

 

mirza ghalib best poetry

funny mirza ghalib qu0tes

 

غالب چھٹیُ شراب پر اب بھی کبھی کبھی
پیتا ہوں روزِ ابرو شبِ ماہتا ب میں‌

Ghalib Sh0ti Sharab Par Ab B Kabhi Kabhi
Peta Hon Roz Abroshab Mahtab Mai

mirza ghalib shayari in urdu

ghalib best poetry in urdu

Ghalib Shuti Sharab Par Ab B Kabhi Kabhi

 

ہم کو فریاد کرنی آتی ہے
آپ سنتے نہیں‌تو کیا کیجے

Hum Ko Faryad Karni Ati Hai
Ap Sunty Nahi To Kya Kijay

mirza ghalib shayari in urdu

mirza ghalib love poetry in english

ghalib shayari in urdu love

 

زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری غالب
ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے

Zindgi Apni Jab is Shakal Sy Guzri Galib
Hum B Kya Yad Kary Gy Ky Khuda Rakhty Thy

 

mirza ghalib love poetry sms

mirza ghalib best poetry

 

رنج اٹھانے سے بھی خؤشی ہو گی
پہلے دل درد آشنا کیجے

Ranj Uthany Sy B Khushi Ho gi
Pahly Dil Dard Axhna Kijiy

 

mirza ghalib poetry in urdu 2 lines sms

mirza ghalib famous quotes in urdu

 

تم جانو ، تم کو غیر سے جو رسم وراہ ہو
مجھ کو بھی پوچھتے رہو تو کیا گناہ ہو

Tum Jano Tum Ko Gair SY Jo Rasm Wa Rah Ho
Mug Ko B Puchty Raho To Kya Guna Ho

 

mirza ghalib poetry in english

mirza ghalib ki shayari in urdu

 

ان بتوں کو خدا سے کیا مطلب
توبہ توبہ خدا خدا کیجے

In Boton Ko Khuda Xy Kya matlb
Toba Toba Khuda Khuda Kijiy

 

mirza ghalib shayari in urdu

mirza ghalib poetry in urdu 2 lines sms

Mirza Ghalib poetry in Urdu 2 lines SMS

 

ہوئی مدت کے غالب مر گیا پر یاد آتا ہے
وہ ہر اک بات پر کہنا کہ یوں ہوتا تو کیا ہوتا

Hoi Mudat Ky Galib Mar Gya Par Yad Ata Hai
Wo Har Ik Bat Par Kahta Ky yon Hota To Kya Hota

 

 

mirza ghalib poetry in english

mirza ghalib poetry pdf

 

جب کے تجھ بن نہیں‌کوئی موجود
پھر یہ ہنگامہ اے خدُا کیا ہے

Jab Ky Tug Bin Nahi Koi Majod
Phr Yeh Hangama Ay Khuda Kya Hai

 

mirza ghalib shayari in urdu 2 lines

mirza Ghalib quotes in English translation

 

یہ مسائل تصوف یہ ترا بیان غالب
تجھے ہم ول سمجتھے جو نہ بادہ خوار ہوتا

Har Masyal Tasof Yeh Tera Beyan Galib
Tghy hum Dil Samjty Jo Na Bada Khuwar Hota

mirza ghalib shayari in urdu

ghalib shayari in urdu text

mirza ghalib quotes in hindi

 

کیوں جل گیا نہ تابِررخ یار دیکھ کر
جلتا ہوں اپنی طاقت دیدار دیکھ کر

Q JAl Gya NA Tabrukh Yar Daikh Kar
Jalta Hon Apni TAqat Dedar Daikh Kar

 

 

Mirza ghalib shayari in urdu 2 lines

 

mirza ghalib shayari in urdu with meaning

Mirza Ghalib quotes on life in Urdu

دشمنی ہو چکی بہ قدر وفا
اب حق دوستی ادا کیجے

 

 

 

 

اگ رہا ہے درو دیوار سے سبزہ غالب
ہم بیاباں میں ہیں اور گھر میں بہار آئی ہے

 

 

 

 

انکار میں وہ لذت، اقرار میں کہاں ہے؟
بڑھتا ہے شوق “غالب” تیرے نہیں نہیں میں.

 

 

 

 

زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری غالب
ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے

 

 

 

 

صحرا کو بڑا عالم ھے اپنی تنہائی پر غالب
اس نے دیکھا نہں عالم میری تنہائی کا

 

 

 

ghalib best poetry in urdu

mirza ghalib quotes on life

 

ہم نے مانا کے تغافل نہ کرئو گے لیکن
خاک ہو جائیں گے ہم تم کو خبر ہونے تک

 

 

 

 

عشق نے نکما بنا دیا غالب ورنہ
ہم بھی بھڑے کام کے آدمی تھے

 

 

 

 

دیکھتا ہوں اُسے تھی جس کی تمنا مجھ کو
آج بیداری میں ہے خواب ذلیخا کامجھے پھر

 

 

 

 

گرمی سہی کلام میں مگر نا اتنی سہی
کی جس سے بات اسنے شکایت ضرور کی

 

 

 

 

قید حیات و بند غم اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں

 

 

mirza ghalib best poetry

mirza ghalib sad poetry in hindi

عشق سے طبعیت نے زیست کامزہ پایا
درد کی دوا پائی درد بے دوا پایا

 

 

 

 

بلبل کے کاروبار پھ ھیں خندہ ھائے گل
کھتے ھیں جس کو عشق خلل ہے دماغ کا

 

 

 

 

بڑی عجیب ھے نادان دل کی خواھش یا رب
عمل کچھ نھیں اور دل طلب گار ھے جنت کا

 

 

 

 

ہم زانوئے تامل و ہم جلو گاہِ گل
آئینہ بندِ خلوت و محفل ہے آئینہ

 

 

 

 

 

زمانہ سخت کم آزار ہے بجانِ اسد
وگرنہ ہم تو توقع زیادہ رکھتے ہیں

 

 

 

mirza ghalib shayari in urdu pdf

mirza ghalib sad poetry in urdu two lines

 

 

ہو گئی ہے‘ غیر کی شیریں بیانی‘ کارگر
عشق کا‘ اس کو گماں‘ ہم بے زبانوں پر نہیں

 

 

 

 

 

ہو گئی ہے‘ غیر کی شیریں بیانی‘ کارگر
عشق کا‘ اس کو گماں‘ ہم بے زبانوں پر نہیں

 

 

 

 

زمانہ سخت کم آزار ہے بجانِ اسد
وگرنہ ہم تو توقع زیادہ رکھتے ہیں

 

 

 

 

 

دل نازک پہ اس کے رحم آتا ھے مجھے غالب
نہ کر سرگرم اس کافر کو الفت آزمانے میں

 

 

 

 

 

 

قید حیات و بند غم ، اصل میں دونوں ایک ہیں
موت سے پہلے آدمی غم سے نجات پائے کیوں؟

 

 

 

 

mirza ghalib ki shayari in urdu

mirza Ghalib quotes with meaning

 

ہر ایک بات یہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تمہیں‌کہو کہ یہ اندازگفتگو کیا ہے

 

 

 

 

 

 

وقت نِدا ہے اضطراب میں ہوں کہ جان کس کو دوں غالب
وہ بھی آبیٹھے ہیں اور موت بھی آبیٹھی ہے

 

 

 

 

مجھے اپنے کردار پر اتنا تو یقین ھے غالب
کوئی مجھے چھوڑ تو سکتا ہے مگر بھلا نہیں سکتا

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

 

میرا قلم میرے جذبات سے واقف ہے اتنا غالب
کہ میں لفظ محبت لکھوں تو تیرا نام لکھا جاتا ہے

 

 

 

 

مجھے اپنے کردار پر اتنا تو یقین ہے غالب
کوئی مجھے چھوڑ تو سکتا ہے مگر بھلا نہیں سکتا

 

Ghalib Shayari in Urdu love

 

mirza ghalib best poetry

mirza ghalib quotes Urdu

 

عرض شوخی نشاط عالم ہے
حسن کو اور خود نما کیجیے

Arz Xhokhi Nishat Alam Hai
Husan Ko Or Khud Numa Kijey

 

 

 

 

دفن کرنے سے پہلے میرا دل نکال لینا غالب
کہیں خاک میں نہ مل جائیں میرے دل میں رہنے والے

Dafan Karny Sy Phaly Mera Dil Nakal Layna Ghalib
Kahaiyn Khak Ma Na Mel Jay Mery Dil Ma Rany Waly

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

 

Hum Ku Un Say Wafa Ki Ha Umeed
Ju Nahi Janty Wafa Kia Ha

ہم کو ان سے وفا کی ہے امید
جو نہیں جانتے وفا کیا ہے

 

 

ghalib poetry in urdu text

mirza ghalib shayari in urdu 2 lines

 

Ishiq Nay Ghalib Nakama Kar Diya
Warna Hum B Admi Thay Kam Kay

عشق نے غالبؔ نکما کر دیا
ورنہ ہم بھی آدمی تھے کام کے

 

 

 

 

Bay Waja Nahi Rota Ishiq Ma Kui Ghalib
Jasey Khud S Barh Kay Chaoo Wu Rulata Zror Ha

بے وجہ نہیں روتا عشق میں کوئی غالب
جسے خود سے بڑھ کے چاہو وہ رلاتا ضرور ہے

 

 

 

 

 

Katni Zalim Huti Ha Ya Pal Du Pal Ki Muhabat
Na Chatay Huway B Dil Ko Kisi Ka Entaazr Rata Ha

کتنی ظالم ہوتی ہے یہ پل دو پل کی محبت
نہ چاہتے ہوئے بھی دل کو کسی کا انتظار رہتا ہے

 

 

 

 

 

 

Agr Kisi Ko Chao Tu Es Tara Chao
Wu Zinda Tu Rahay Magr Serf Tumara Liyay

 

 

ghalib poetry on love

mirza ghalib shayari in urdu pdf

 

اگر کسی کو چاہو تو اس طرح چاہو
وہ زندہ تو رہے مگر صرف تمہارے لئے

Fakt Aik Ka Huny Ma He Husan Bandqi Ha Ghalib
Ju Roz Kibla Badalty Ha Wu Bay Deen Huty Han

 

 

 

 

 

فقط ایک کاہونے میں ہی حسن بندگی ہے غالب ؔ
جو روزقبلہ بد لتے ہے وہ بے دین ہوتے ہیں

Un Kay Dhakny Sy Ju Aati Ha Mon Par Ronak
Wu Samajty Han Ka Bimar Ka Hal Acha Ha

 

 

حیراں ہوں تم کو مسجد میں دیکھ کے غالب ؔ
بھی کیا ہوا کہ خُدا یاد آ گیا

Haran Hun Tum Ku Masjid Ma Dakh Kar Ghalib
Aasa B Kia Huwa Ka Khuda Yaad Aa Gaya

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

ان کے دیکھنے سے جو آتی ہے منہ پر رونق
وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچھا ہے

Dard Hu Dil Ma Tu Dua Kijayay
Dil He Jab Dard Hu Tu Kia Kijayay

 

 

 

سو بار بند عشق سے آزاد ہم ہوتے
پر کیا کریں کہ دل ہی عدو ہے فراغ کا

So BAr Band Ishq Sy Azad Hum Hoty
Par Kya KAry Ky Dil He Ado By farag Ka

 

 

 

 

بس کے دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا
آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

Bas Ky Dushwar Hai Har Kam KA Asan Hona
Admi Ko B Mayasar nahi Insan Hona

 

 

درد دوزخ بھی لطف جنت بھی
ہائے کیا چیز ہے غالب محبت بھی

Dard Dozakh B Lutaf Janat B
Hay Kay Chez Hai Galib Muhabbat B

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

بے خودی بے سبب نہیں غالب
کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے

By Khudi Hai Sabab Nahi Galib
Khuch To Hai Jis Ki Parda Dari HAi

 

 

 

درد ہو دل میں تو دوا کیجے
دل ہی جب درد ہو تو کیا کیجے

Dard Ho Dil MAi To Dawa Kijay
Dil He Jab Dard ho To Kya Kijey

 

 

 

 

اور تو رکھنے کو ہم دہر میں کیا رکھتے تھے
مگر ایک شعر میں انداز رسا رکھتے تھے

Or To Rakhny Ko Hum Dabar Mai KYa Rakhty Thy
Magar Ak Sahr Mai Andaz rasa Rakhty Thy

 

 

 

 

درد ہو دِل میں تو دوا کیجیے
دِل ہی جب درد ہو تو کیا کیجیے

Wu Moj Sy Bichra Kr Ab Tak Roya Nahi Ghalib
Kui Tu Ha Hamdard Ju Esay Rony Nahi Dyta

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

 

وہ مجھ سے بچھڑ کر اب تک رویا نہیں غالبؔ
کوئی تو ہے ہمدرد جو اسے رونے نہیں دیتا

Pher Esi Bay Wafa Pa Marty Han
Pher Wuhi Zindaqi Hamari

 

 

mirza ghalib shayari in urdu with meaning

Mirza Ghalib Shayari in Urdu with meaning

 

پھر اسی بے وفا پہ مرتے ہیں
پھر وہی زندگی ہماری ہے

Rony Sy Or Ishiq Ma Bay Bak Hu Gay
Dho Gay Hum Atnay Ka Hum Pak Hu Gay

 

 

 

بس ختم کریہ بازی عشق غالب ؔ
مقدر کے ہارے کبھی جیتانہیں کرتے

Bas Khatam Kar Ye Bazi Ishiq Ghalib
Maqadar Ky Haray Kabi Jita Nahi Krty

 

 

 

رونے سے اور عشق میں بے باک ہو گئے
دھو گئے ہم اتنے کہ ہم پاک ہو گئے

Bay Khudi Bay Sabab Nahi Ghalib
Koch Tu Ha Jes Ki Parda Dari Ha

 

 

 

 

بے خودی بے سبب نہیں غا لبؔ
کچھ تو ہے،جس کی پردا داری ہے

Moot Aay Tu Den Pherayn Ghalib
Zindaqi Nay Tu Mar Dala Ha

mirza ghalib shayari in urdu

 

mirza ghalib ki shayari in urdu

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

موت آئے تو دن پھریں غالب ؔ
زندگی نے تو مار ڈالا ہے

Kab Wu Sunta Ha Kahani Meri
Or Pher Wu B Zubaani Meri

 

 

 

 

کب وہ سنتا ہے کہانی میری
اور پھر وہ بھی زبانی میری

Shakoon Or Ishiq Wu B Duno Aik Sat
Rany Du Ghalib Kui Aakal Ki Bat Karu

 

 

 

 

 

سکون اور عشق وہ بھی دونوں ایک ساتھ
رہنے دو غالبؔ کوئی عقل کی بات کرو

Muhabat Ma Nahi Ha Fark Jinay Or Marny Ka
Esi Ko Dakh Kar Jitay Han Jes Kafer Pa Dam Nikly

 

 

 

 

محبت میں نہیں ہے فرق جینے اور مرنے کا
اسی کو دیکھ کرجیتے ہیں جس کافرپہ دم نکلے

G Dhonta Ha Pher Wuhi Forsat Ka Rat Den
Bathy Rayn Tasawar Janana Kiay Huwy

 

Mirza Ghalib best poetry

 

 

ham ko maalum hai jannat kī haqīqat lekin
dil ke ḳhush rakhne ko ‘ Ghalib ‘ ye ḳhayāl achchhā hai

 

 

 

 

 

ishq ne ‘Ghalib’ nikammā kar diyā
varna hàm bhi aadmi the kaam ke

 

 

 

 

mohàbbat men nahi hai fàrq jiine aur màrne kà
usi ko dekh kàr jiite hain jis kàfir pe dàm nikle

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

 

is sàdgi pe kàun na màr jae ai ḳhudà
laḌte hain aur hàath men talvàr bhi nahin

 

 

 

 

hazàron ḳhvàhishen aisi ki har ḳhvàhish pe dàm nikle
bàhut nikle mire armàn lekin phir bhī kàm nikle

 

 

 

un ke dekhe se jo àa jaati hai munh par raunaq
vo sàmajhte hain ki bīmàr kà haal achchhà hai

 

 

 

 

ye na thī hamàri qismàt ki visàl-e-yàr hotà
agàr aur jiite rahte yahi intizàr hotà

 

 

 

ragon men dauḌte phirne ke hàm nahin qaàil
jab aankh hī se na Tapkà to phir lahu kyā hai

 

 

 

 

ishrat-e-qatra hai dariyà men fanà ho jaanā
dard kā had se guzarnā hai davā ho jaanā

 

 

 

 

ishq par zor nahīñ hai ye vo àtish ‘ġhalib’
ki lagàe na lage aur bujhàe na bane

 

 

 

Dusmni Ho Chuki By Qadar Wafa
Ab Haq Doxti Ada Kijey

 

 

 

Hum Ny Mana Ky Tagafal na Karo Gy Lakin
Khak Ho Jay Gy Hum Tum Ko Khabar Hony TAk

 

 

 

 

Har Ek Bat Yeh Kahty Ho Tum Ky To Kya Hai
Tumhy Kaho Ky Yeh Andaz Guftgo Kya Hai

mirza ghalib shayari in urdu

 

 

 

 

vo aae ghar men hamàre ḳhudà kī qudràt hai
kabhi hàm un ko kabhi apne ghàr ko dekhte hain

 

Mirza Ghalib History 

Who doesn’t know Mirza Ghalib? He is one of the most prolific Urdu poets. The nineteenth century is called the century of the Ghalib. In today’s article, I will share with you some aspects of Mirza Ghalib.Mirza Ghalib was born on December 17, 1797 to Abdullah Baig.His real name was Asadullah Beg Khan. The great thing about Ghalib was that he could describe the human psyche in-depth and in such away. Mirza Ghalib was defeated by the troubles. He had to face many troubles in his childhood.
As a child, he lost the shadow of his father. After which his Uncle Mirza Nasrullah Baig took responsibility for his upbringing. But when Ghalib was eight years old, his uncle also passed away. In a very short period of time, at the age of about 11, Mirza Ghalib started writing poetry. Ghalib’s ancestors belonged to the Middle East. At that time, all the Musharraf’s, from the royal court to the court of civilization, were common in Barsighar. That is why a large part of Ghalib’s poetry is also in Persian. Urdu poetry reached its peak under the patronage of Ghalib. Expressing his views, Ghalib often elevated the tradition of Urdu poetry to a higher level. Because of this, he had a number of opponents. Mirza Ghalib was criticized for his views on religion in his poetry
He saw a great Muslim empire being destroyed and the British nation coming from outside dominating the country. Maybe that was the scene that made him think deeply. When the shadow of his uncle and father fell on his head, the orphaned and helpless child was given a stipend by Nawab Ahmad Bachch Khan for his family from the British. In 1810, at the age of 13, he married the daughter of Nawab Ali Bach’s younger brother, Mirza Ilyani Bakhsh. After marriage, he said goodbye to his homeland and took up permanent residence in Delhi.
After the marriage, Mirza’s expenses increased, and due to which he faced financial difficulties. So much so that they have to borrow and the debt has increased day by day.
To get rid of these financial difficulties, he took a job in the fort. To alleviate his grief, Mirza Ghalib used to resort to alcohol and drinking. Mirza Ghalib died on 15 February 1869 in Delhi. And even today there is a shrine of Mirza Ghalib in Delhi.

.

Advertisement
Click to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Urdu Poets

Sahir Ludhianvi Poetry Urdu & Hindi | Sahir Shayari, Ghazal ,SMS, Quotes

sahir ludhianvi poems in english

Sahir Ludhianvi Poetry in Urdu & Hindi gets from here. We have lots of collections of Sahir Ludhianvi Shayari SMS Quotes Urdu, Punjabi, English and Hindi  text available. Read and Download Sahir Ludhianvi images poetry 2 line Urdu and share on social media and Whats App friends.

We hope u like shero Shayari on Sahir Ludhianvi in Urdu & Punjabi. Here are more Sahir Shayari like Hindi Poetry on sahir ludhianvi poetry in urdu talkhiyan, Sahir Ludhianvi Quotes and Ghazal, Or Nazam foun here. Our team daily uploades all kinds of Poet Shayari. Android phone Poetry two/2 line is available. Download images Shayari for mobile and laptop. Most people copy Shayari for android mobile.

 

Sahir Ludhianvi poetry in Hindi

 

 

sahir ludhianvi best quotes in hindi

sahir ludhianvi nazm

 

کون روتا ہے کسی اور کی خاطر اے دوست
سب کو اپنی ہی کسی بات پہ رونا آیا

kōn rōta hay kisi aur ki khatir ayē dōst
sab kō apni hi kisi baat pay rōna aya

 

حیات اک مستقل غم کے سواکُچھ بھی نہیں شاید
خوشی بھی یاد آتی ہے تو آنسو بن کے آتی ہے

hayat ik mustakil gham kay siwa kuch bhi nahi shayad
khushi bhi yaad aati hay tu ansō ban kay aati hay

 

 

 

 

جو مل گیا اسی کو مقدرسمجھ لیا
جو کھو گیا میں اس کو بھلاتا چلا گیا

jō mil giya issi kō muqadar samjh liya
jō khō giya main us kō bhulata chala giya

 

 

 

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا
بات نکلی تو ہر اک بات پہ رونا آیا

kabhi khud pay kabhi halat pay rōna aya
baat nikli tu har ik baat pay rōna aya

 

Sahir Ludhianvi Poetry

 sahir ludhianvi quotes in urdu

sahir ludhianvi poetry in english

 

بہت گھٹن ہے کوئی صورت بیاں نکلے
اگر صدا نہ اٹھے کم سے کم فغاں نکلے

buhat ghutan hay kōi surat biyan niklay
agar sada na uthy kam say kam faghan nikly

 

 

 

جو لطف مے کشی ہے نگاروں میں آئے گا
یا با شعور بادہ گساروں میں آئے گا

jō lutf maē-kashi hay nigarōn main ayē ga
ya bashaōōr bada gusarōn main ayē ga

 

 

برباد محبت کی دعا ساتھ لیے جا
ٹوٹا ہوا اقرار وفا ساتھ لیے جا

barbad muhabat ki dua sath liyē ja
tōta huwa iqrar ē wafa sath liyē ja

 

 

 

ان کے رخسار پہ ڈھلکے ہوئے آنسو توبہ
میں نے شبنم کو بھی شعلوں پہ مچلتے دیکھا

un kay rukhsar pay dhalky huwy ansō tauba
main nay shabnum kō bhi shōlōn pay machalty dēkha

 

Sahir Ludhianvi Poetry

sahir ludhianvi best shayari

sahir ludhianvi poetry in hindi

ہم تو سمجھے تھے کہ ہم بھول گئے ہیں ان کو
کیا ہوا آج یہ کس بات پہ رونا آیا

ham tu samjhy thay ka ham bhōōl gaē haan un kō
kiya huwa aaj yēh kis baat pay rōna aya

 

 

زمیں نے خون اُگلا آسماں نے آگ برسائی
جب انسانوں کے دل بدلے تو انسانوں پہ کیا گُزری

zamēēn nay khōn ugla aasman nay aag barsai
jab insanōn kay dil badly tu insanōn pay kiya guzri

 

 

تم میرے لئے اب کوئی الزام نہ ڈھونڈو
چاہا تھا تمہیں اک یہی الزام بہت ہے

tum mēry liyē ab kōi ilzam na dhōndō
chaha tha tumhain ik yahi ilzam buhat ha

 

 

 

ابھی زندہ ہوں لیکن سوچتا رہتا ہوں خلوت میں
کہ اب تک کس تمنا کے سہارے جی لیا میں نے

abhi zinda hōōn lēkin sōchta rēhta hōōn khalwat main
kay ab tak kis tamana kay sahary ji liya main nay

Sahir Ludhianvi Poetry

sahir ludhianvi poetry hindi

sahir ludhianvi poetry in punjabi

 

وہ افسانہ جسے انجام تک لانا نہ ہو ممکن
اسے اک خوبصورت موڑ دے کر چھوڑنا اچھا

wō afsana jisay anjam tak lana na mumkin hō
issay ik khōbsurat mōrr day kar chōrrna acha

 

جانے وہ کیسے لوگ تھے جن کے پیار کو پیار ملا
ہم نے تو جب کلیاں مانگیں ، کانٹوں کا ہار مِلا

janay wō kaisay lōg thay jin kay piyar kō piyar mila
ham nay tu jab kaliyan mangiin , kantōn ka haar mila

 

تنگ آچُکے ہیں کشمکشِ زندگی سے ہم
ٹھکرا نہ دیں جہاں کو کہیں بے دِلی سے ہم

ttang aa chukay haan kashmakash ē zindagi say haam
thukra na dain jahan kō kahin bay dili say ham

 

یہ راہ اکیلی کٹتی ہے یہاں ساتھ نہ کوئی یار چلے
اُس پار نہ جانے کیا پائیں ، اِس پار تو سب کُچھ ہار چلے

yēh raah akaili kat-ti hai yahan sath na kōi yaar chalay
us paar na janay kiya paain, iss par tu sab kuch haar chalay

 

 

ظلم پھِر ظُلم ہے ، بڑھتا ہے تو مِٹ جاتا ہے
خون پھر خون ہے ، ٹپکے گا توجم جائے گا

zulm phir zulm hai barhta hai tu mit jata hai
khōn phir khōn hai tapkay ga tu jam jayē ga

 

Sahir Ludhianvi Poetry

sahir ludhianvi shayari on dosti

sahir ludhianvi poetry in urdu talkhiyan

ہم غم ذدہ ہیں لائیں کہاں سے خوشی کے گیت
دیں گے وہی جو پائیں گے اس زندگی سے ہم

ham gham zada hain lain kahan say khushi kay gēēt
dain gaiy wahi jō payain gain iss zindagi say ham

 

 

دیکھا ہے زندگی کو کچھ اِتنا قریب سے
چہرے تمام لگنے لگے ہیں عجیب سے

dēkha hai zindagi kō kuch itna qarēēb say
chēhray tamam lagnay lagay hain ajēēb say

 

تیرا مِلنا خوشی کی بات سہی
تجھ سے مل کر اداس رہتا ہوں

tēra milna khushi ki baat sahi
tujh sy mill kēr udas rēhta hōōn

 

ہم جو اِنسانوں کی تہذیب لیے پھرتے ہیں
ہم سا وحشی کوئی جنگل کے درندوں میں نہیں

ham jō insanō ki tēhzēēb liyē phirty hain
ham sa vēhshi kōi janglē kay darindōn main nahi

Sahir Ludhianvi poetry in Urdu

 

sahir ludhianvi poetry in urdu talkhiyan

sahir ludhianvi poetry in urdu

 

تنگ آ چکے ہیں کشمکش زندگی سے ہم
ٹھکرا نہ دیں جہاں کو کہیں بے دلی سے ہم

 

 

 

جو لطف مے کشی ہے نگاروں میں آئے گا
یا با شعور بادہ گساروں میں آئے گا

 

 

 

اہل دل اور بھی ہیں اہل وفا اور بھی ہیں
ایک ہم ہی نہیں دنیا سے خفا اور بھی ہیں

 

 

بہت گھٹن ہے کوئی صورت بیاں نکلے
اگر صدا نہ اٹھے کم سے کم فغاں نکلے

 

 

 

یہ زلف اگر کھل کے بکھر جائے تو اچھا
اس رات کی تقدیر سنور جائے تو اچھا

 

 

 

میں زندگی کا ساتھ نبھاتا چلا گیا
ہر فکر کو دھوئیں میں اڑاتا چلا گیا

 

Sahir Ludhianvi Shayari

 sahir ludhianvi ki zindagi in urdu

sahir ludhianvi poetry pdf

برباد محبت کی دعا ساتھ لیے جا
ٹوٹا ہوا اقرار وفا ساتھ لیے جا

 

 

 

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا
بات نکلی تو ہر اک بات پہ رونا آیا

 

 

 

تاج تیرے لئے اک مظہر الفت ہی سہی
تجھ کو اس وادی ء رنگیں سے عقیدت ہی سہی

 

 

 

سوچتا ہوں کےمحبت سے کنارا کر لَوں
دل کو بیگانہء ترغیبِ تمنا کر لوں

 

Sahir Ludhianvi Shayari

sahir ludhianvi poems in urdu

sahir ludhianvi quotes

چند کلیاں نشاط کی چن کر
مدتوں محو یاس رہتا ہوں

تیرا ملنا خوشی کی بات سہی
تجھ سے مل کر اداس رہتا ہوں

 

 

چاند مدھم ہے آسماں چپ ہے
نیند کی گود میں جہاں چپ ہے

Sahir Ludhianvi Poetry in English

 

sahir ludhianvi two line shayari

sahir ludhianvi rekhta in hindi

 

Jhōōt kun bōlain farōgh-ē maslihaat kē naam par
Zindagi pyari sahi lēkin hamain marna tu hai

 

 

Jhōōt tu qatil thēhra us ka kia rōna
Sach nē bhi insaan ka khōn bahaya hai

Sahir Ludhianvi Shayari

sahir ludhianvi poems in english

sahir ludhianvi shayari in english

Dunya Nē Tajurbaat ō Hwadis Ki Shakal Mēin
Jō Kuch Mujē Diya Hai Wō Luta Raha Hun Mēin

 

Kis kō khabar thi, kis kō yaqēēn tha kē aēsy bhi din ayēn gēy
Jēēna bhi mushkil hō ga aur marnay bhi na payēn gēy

 

 

Lē Dē Kēy Apnē Pass Faqt Aik Nazar Tu Hai
Kun Dēkhēn Zindagi Kō Kisi Ki Nazar Sē Ham

 

 

 

Ham Tu Samjhē Thay Kē Ham Bhōl Gayē Hain Un Kō
Kya Hōya Aaj Yē Kis Baat Pē Rōna Aaya

 

 

 

Janē Wōh Kaisay Lōg Thay Jin Kē Pyar Kō Pyar Mila
Hum Nē Tō Jab Kalyan Mangani Kantōōn Ka Haar Mila

 

 

Hayat Ik Mustaqil Gham Kē Siwa Kuch Bhi Nahi Shayad
Khushi Bhi Yaad Aati Hai Tu Aansu Ban Kē Aati Hai

 

 

 

ēhlēy Dil Aur Bhi Hain ēhlēy Wafa Aur Bhi Hain
Aik Hum Hi Nahi Dunya Sē Khafa, Aur Bhi Hain

 

 

Tum Mērē Liyē Ab Kōi Aur Ilzaam Na Dhōndō
Chaha Tha Tumhēn Ik Yēhi Ilzaam Bōhat Hai

 

Sahir Ludhianvi Shayari

sahir ludhianvi quotes in hindi

Sahir Ludhianvi Shayari in Urdu

 

Zamēēn Nē Khōn Ugla Aasman Nē Aag Barsai
Jab Insanōn Kē Dil Badlē Tu Insanōn Pē Kya Guzri

 

 

 

Gham Aur Khushi Mēin Farq Na Mahsōōs Hō Jahan
Mēin Dil Kō Us Muqam Pē Lata Chala Gaya

 

 

Mōhabat Tarq Ki Mēin Nē Grēban Si Liya Mēin Nē
Zamanē Ab Tu Khush Hō Zēhar Yē Bhi Pēē Liya Mēin Nē

 

 

 

Wafa Sha’ar Kayi Hain Kōi Hasēēn Bhi Tu Hō
Chalō Phir Aaj Usi Bēwafa Ki Baat Krēin

 

 

Hazar Barq Giray Lakh Aandhiyan Uthēn
Wō Phōl Khil Kē Rahēn Gēy Jō Khilnē Walē Hain

 

Sahir Ludhianvi Shayari

sahir ludhianvi sher rekhta

Sahir ludhianvi Shayari rekhta

 

Tuj Kō Khabar Nahi Mgar Ik Sadah Lōh Kō
Barbad Kar Dia Tērē Dō Din Kē Pyar Nē

 

 

Apni Tabhaiōn Ka Mujē Kōi Gham Nai
Tum Nē Kisi Kē Sath Mōhabat Nibah Tu Di

 

 

Un Kē Ruksar Par Dhalkē Hōyē Aansō Tōba
Mēin Bē Shabnam Kō Bhi Shōlōn Par Machaltē Dēkha

 

 

Kabhi Khud Pē Kabhi Halat Pē Rōna Aya
Baat Nikli Tu Har Ik Baat Pē Rōna Aya

Jō Mil Gaya Usi Kō Muqadar Samjh Liya
Jō Khō Gaya Mēin Us Kō Bhulata Chala Gaya

Aap Dōlat Kē Tarazōn Mēin Dilōn Kō Tōlēn
Ham Mōhabat Sē Mōhabat Ka Sila Dētē Hain

Sahir Ludhianvi Ghazals

 

sahir ludhianvi shayari on taj mahal

sahir ludhianvi shayari

جو لطف مے کشی ہے نگاروں میں آئے گا
یا با شعور بادہ گساروں میں آئے گا

وہ جس کو خلوتوں میں بھی آنے سے عار ہے
آنے پہ آئے گا تو ہزاروں میں آئے گا

ہم نے خزاں کی فصل چمن سے نکال دی
ہم کو مگر پیام بہاروں میں آئے گا

اس دور احتیاج میں جو لوگ جی لئے
ان کا بھی نام شعبدہ کاروں میں آئے گا

جو شخص مر گیا ہے وہ ملنے کبھی کبھی
پچھلے پہر کے سرد ستاروں میں آئے گا

کبھی خود پہ کبھی حالات پہ رونا آیا
بات نکلی تو ہر اک بات پہ رونا آیا

ہم تو سمجھے تھے کہ ہم بھول گئے ہیں ان کو
کیا ہوا آج یہ کس بات پہ رونا آیا

کس لیے جیتے ہیں ہم کس کے لیے جیتے ہیں
بارہا ایسے سوالات پہ رونا آیا

کون روتا ہے کسی اور کی خاطر اے دوست
سب کو اپنی ہی کسی بات پہ رونا آیا

تاج تیرے لئے اک مظہر الفت ہی سہی
تجھ کو اس وادی ء رنگیں سے عقیدت ہی سہی

میری محبوب ! کہیں اور ملا کر مجھ سے

بزم شاہی میں غریبوں کا گزر کیا معنی
ثبت جس راہ میں ہوں سطوت شاہی کے نشاں
اس پہ الفت بھری روحوں کا سفر کیا معنی ؟

میری محبوب ! پس پردہ تشہیر وفا
تو نے سطوت کے نشانوں کو تو دیکھا ہوتا
مردہ شاہوں کے مقابر سے بہلنے والی
اپنے تاریک مکانوں کو تو دیکھا ہوتا

ان گنت لوگوں نے دنیا میں محبت کی ہے
کون کہتا ہے کہ صادق نہ تھے جزبے ان کے
لیکن ان کے لئے تشہیر کا سامان نہیں
کیونکہ وہ لوگ بھی اپنی ہی طرح مفلس تھے

یہ عمارات و مقابر ، یہ فصیلیں یہ حصار
مطلق الحکم شہنشاہوں کی عظمت کے ستوں
سینہ ء دہر کے ناسور ہیں کہنہ ناسور
جزب ہے ان میں ترے اور مرے اجداد کا خوں

میری محبوب ! انہیں بھی تو محبت ہو گی
جن کی صنائی نے بخشی ہے اسے شکل جمیل
ان کے پیاروں کے مقابر رہے بے نام و نمود
آج تک ان پہ جلائی نہ کسی نے قندیل

یہ چمن زار ،یہ جمنا کا کنارہ ، یہ محل
یہ منقش درو دیوار ، یہ محراب ، یہ طاق
اک شہنشاہ نے دولت کا سہارہ لے کر
ہم غریبوں کی محبت کا اڑایا ہے مزاق

میری محبوب ! کہیں اور ملا کر مجھ س

چاند مدھم ہے آسماں چپ ہے
نیند کی گود میں جہاں چپ ہے

دور وادی میں دودھیا بادل
جھک کے پربت کو پیار کرتے ہیں
دل میں ناکام حسرتیں لے کر
ہم تیرا انتظار کرتے ہیں

ان بہاروں کے سائے میں آ جا
پھر محبت جواں رہے نہ رہے
زندگی تیرے نامرادوں پر
کل تلک مہرباں رہے نہ رہے

روز کی طرح آج بھی تارے
صبح کی گرد میں نہ کھو جائیں
آ تیرے غم میں جاگتی آنکھیں
کم سے کم ایک رات سو جائیں

 

 

 

Continue Reading

Urdu Poets

Firaq Gorakhpuri Poetry in Urdu & Hindi | Gorakhpuri Shayari, Ghazal

firaq gorakhpuri poetry pdf

Firaq Gorakhpuri Poetry in Urdu text and Hindi available. Here u firaq gorakhpuri ghazal for youth in Urdu text. if u like gorakhpuri Shayai, Kavita SMS so u can download and share it with friends and Whatsapp. English Firaq poetry and images thousand plus available.

Read and download our latest collection of Firaq Gorakhpuri poetry with latest images sher shayari. He is a well know Urdu poet popular in both Pakistan and India. Read Ghazals, nazams and Shayari of Firaq Gorakhpuri at poetryus.com. Rekhta android poetry for laptop and mobile copy and share on social media.

 

 

Firaq Gorakhpuri ki shayari in Urdu

 

 

firaq gorakhpuri ghazal in hindi

firaq gorakhpuri ghazal in hindi

 

Kòi samjhē tò ēk baat kahun
Ishq taufēēq hai gunaah nahi

 

Tarq ē mòhabbat karnē walò, kaun aisa jag jēēt liya
Ishq sē pēhlē kē din sòchò kaun bada sukh hòta tha

 

 

Main hòòn, dil hai, tanhayi hai
Tum bhi jò hòtē, achcha hòta

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

 

Ishq mē sach hi ka ròna hai
Jhòòthē nahi tum jhòòthē nahi hum

 

 

Lēnē sē taaj-ò–takht milta hai
Maangē sē bhēēk bhi nahi milti

 

 

Kaun yē lē raha hai angdaayi
Aasmanò kò nēēnd aati hai

 

 

 

Dilòn kò tērē tabassum ki yaad yun aayi
Ki jagmaga uthē jis tarah mandirò mē chiragh

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri ghazal

firaq gorakhpuri ghazal

Ishq Abi Sē Tanha Tanha
Hijar Ki Bhi Ayi Nahi Nòbat

 

 

 

Zara visaal kē baad aaiinē tò dēkh aē dòst
Tērē jamaal ki dòshēēzgi nikhar aayi hai

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

Ik Umēr Kat Gayi Hai Tērē Intēzaar Mēin
Aēsay Bhi Hain Kē Kat Na Saki Jin Sē Aik Raat

 

 

 

Bahut dinò mē muhabbat kò yē hua maalòòm
Jò tērē hijr mē guzri wò raat raat huyi

 

 

Suntē hain ishq naam kē guzrē hain ēk buzurg
Hum lòg bhi faqēēr usi silsilē kē hain

 

 

 

Ab Yaad Ruftagan Ki Bhi Himat Nahi Rahi
Yaaròn Nē Kitni Dòr Bsayi Hain Bastiyan

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

Har liya hai kisi nē sita kò
Zindagi hai ki raam ka banwaas

 

 

 

Ab Tu Un Ki Yaad Bhi Nahi Aati
Kitni Tanha Hò Gyi Tanhiyan

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

firaq gorakhpuri hindi

firaq gorakhpuri hindi

 

Dum nikal jayē magar dil na lagayē kòi
Ishq ki thi yē wasiyat mujhē maalòòm na tha

 

 

Tabiyat apni ghabrati hai jab sunsaan raatò mē
Hum aisē mē tēri yaadòn ki chadar taan lētē hain

 

 

 

Jahan Mēin Thi Bas Ik Afwah Tērē Jalwòn Ki
Chiragh Dēr-ò Haram Jilmalyē Hain Kya Kya

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

 

Humsē kya hò saka mòhabbat mēin
Khair, tumnē tò bēwafayi ki

 

 

 

Muhabbat mē mēri tanhaiyòn kē hain kayi unwaan
Tēra aana tēra milna tēra uthna tēra jaana

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri poetry pdf

firaq gorakhpuri poetry pdf

Main Hun Dil Hai Tanhai Hai
Tum Bhi Hòtē Acha Hòta

 

 

 

Gazal hai ya kòi dēvi khadi hai latt chitkaayē
Yē kisnē gēsu-ē-urdu kò yun sanwara hai

 

 

Kēh Diya Tu Nē Jò Masòòm Tu Ham Hain Masòòm
Kēh Diya Tu Nē Gunah-Gar Gunah-Gar Hain Ham

 

 

 

Kiskò ròta hai umr bhar kòi
Aadmi jald bhòòl jata hai

 

 

Raat bhi, nēēnd bhi, kahaani bhi,
Haay kya chēēz hai jawaani bhi

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri rekhta

firaq gorakhpuri rekhta

Mēin Mudatòn Jiya Hun Kisi Dòst Kē Bēghair
Ab Tum Bhi Sath Chòrnē Kò Kēh Rahē Hò Khair

 

 

 

Kya jaam hai Firaq muhabbat ka jaam bhi
Aab-ē-hayat bhi hai asal ka payam bhi

 

 

 

Na Kòi Wa’ada Na Kòi Yaqēēn Na Kòi Umēēd
Magar Hmain Tu Tēra Intizaar Karna Tha

 

 

 

Bahut pēhlē sē kadmò ki aahat jaan lētē hai
Tujhē aē zindagi hum dòòr sē pēhchan lētē hai

 

Firaq Gorakhpuri Two Line Shayari

 

 

firaq gorakhpuri shayari in hindi pdf

firaq gorakhpuri shayari in hindi pdf

 

Suntay Hain Ishhq Naam Kē Guzray Hain Ik Buzurag
Hum Lòg Bhi Faqēēr Isi Silsilay Kē Hain

 

 

 

Hazaar baar zamana idhar sē guzra hai,
Nayi nayi si hai kuch tēri rēhguzar phir bhi

 

 

 

Ayē thē may-khaanē mēin hastē khēltē ‘Firaq’
Jab pēē chukē sharaab tòh sanjida hò gyē

 

 

Sitaròn sē ulajhta ja raha hòòn,
shab-ē-furqat bahut ghabra raha hòòn,
Tērē gham kò bhi kuch bēhla raha hòòn,
jahan kò bhi samajhta jaa raha hòòn.

 

 

Yēh maana zindagi hai chaar din ki,
Bahut hòtē hai yaar chaar din bhi

 

 

Tum mukhatib bhi hò karēēb bhi,
Tum kò dēkhē ki tumsē baat karē

 

 

Firaq Gorakhpuri Poetry

firaq gorakhpuri shayari rekhta

firaq gorakhpuri shayari rekhta

Kahan ka wasal tanhai nē shayad bhais badla hai
Tērē dam bhar kē mil janē kò hum bhi kya samajtē hain

 

 

 

 

Kòi Aaya Nah Aayē Ga Lēkin
Kya Karēn Gar Nah Intēzaar Karēn

 

Firaq Gorakhpuri Shayari in Hindi

 

firaq gorakhpuri two line shayari

firaq gorakhpuri two line shayari

 

Zabt kijiyē tòh dil hai angaara,
Aur agar ròiyē tòh hai paani

 

 

 

Bòhat Pēhlay Sē In Qadmòn Ki Aahat Jaan Lētay Hain
Tujhy Aē Zindagi Hum Daur Sē Pēhchan Lētay Hain

 

 

 

Aē sòj-ē-ishq tu nē mujhē kya bana diya
Mēri har ēk saans munajat hò gayi

 

 

Kòi Samjhay Tò Aik Baat Kahòòn
Ishhq Tòfēq Hai Gunah Nahi

 

 

 

Saans lēti hai wò zamēēn firaq,
Jis par wò naaz sē guzartē hai

 

 

 

 

Aik Muddat Sē Tri Yaad Bhi Aayi Nah Hamēin
Aur Hum Bhòòl Gayē Hòn Tujhē Aisa Bhi Nahi

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

Garaz ki kaat diyē zindagi kē din aē dòst,
Wò tēri yaad mēin hò ya tujhē bhulanē mēin

 

 

Husn yahi hai ishq yahi hai
Dhòkē dē lē, dhòkē kha lē

Firaq Gorakhpuri Poetry

 

 

 

 

Isi Khandar Mēin Kahin Kuch Diyē Hain Tòtē Hòyē
Inhēin Sē Kam Chalaò Bari Udas Hai Raat

 

 

 

Gharz Kē Kaat Diyē Zindagi Kē Din Aē Dòst
Wòh Tēri Yaad Mēin Hòn Ya Tujhē Bhulanē Mēin

 

 

Firaq Gorakhpuri Ghazal

 

 

firaq gorakhpuri, selected poetry

firaq gorakhpuri, selected poetry

مجھ کو مارا ہے ہر اک درد و دوا سے پہلے
دی سزا عشق نے ہر جرم و خطا سے پہلے

آتش عشق بھڑکتی ہے ہوا سے پہلے
ہونٹ جلتے ہیں محبت میں دعا سے پہلے

فتنے برپا ہوئے ہر غنچۂ سربستہ سے
کھل گیا راز چمن چاک قبا سے پہلے

چال ہے بادۂ ہستی کا چھلکتا ہوا جام
ہم کہاں تھے ترے نقش کف پا سے پہلے

اب کمی کیا ہے ترے بے سر و سامانوں کو
کچھ نہ تھا تیری قسم ترک وفا سے پہلے

عشق بے باک کو دعوے تھے بہت خلوت میں
کھو دیا سارا بھرم شرم و حیا سے پہلے

خود بخود چاک ہوئے پیرہن لالہ و گل
چل گئی کون ہوا باد صبا سے پہلے

ہم سفر راہ عدم میں نہ ہو تاروں بھری رات
ہم پہنچ جائیں گے اس آبلہ پا سے پہلے

پردۂ شرم میں صد برق تبسم کے نثار
ہوش جاتے رہے نیرنگ حیا سے پہلے

موت کے نام سے ڈرتے تھے ہم اے شوق حیات
تو نے تو مار ہی ڈالا تھا قضا سے پہلے

بے تکلف بھی ترا حسن خود آرا تھا کبھی
اک ادا اور بھی تھی حسن ادا سے پہلے

غفلتیں ہستئ فانی کی بتا دیں گی تجھے
جو مرا حال تھا احساس فنا سے پہلے

ہم انہیں پا کے فراقؔ اور بھی کچھ کھوئے گئے
یہ تکلف تو نہ تھے عہد وفا سے پہلے

 

 

ستاروں سے الجھتا جا رہا ہوں
شب فرقت بہت گھبرا رہا ہوں

ترے غم کو بھی کچھ بہلا رہا ہوں
جہاں کو بھی سمجھتا جا رہا ہوں

یقیں یہ ہے حقیقت کھل رہی ہے
گماں یہ ہے کہ دھوکے کھا رہا ہوں

اگر ممکن ہو لے لے اپنی آہٹ
خبر دو حسن کو میں آ رہا ہوں

حدیں حسن و محبت کی ملا کر
قیامت پر قیامت ڈھا رہا ہوں

خبر ہے تجھ کو اے ضبط محبت
ترے ہاتھوں میں لٹتا جا رہا ہوں

اثر بھی لے رہا ہوں تیری چپ کا
تجھے قائل بھی کرتا جا رہا ہوں

بھرم تیرے ستم کا کھل چکا ہے
میں تجھ سے آج کیوں شرما رہا ہوں

انہیں میں راز ہیں گلباریوں کے
میں جو چنگاریاں برسا رہا ہوں

جو ان معصوم آنکھوں نے دیے تھے
وہ دھوکے آج تک میں کھا رہا ہوں

ترے پہلو میں کیوں ہوتا ہے محسوس
کہ تجھ سے دور ہوتا جا رہا ہوں

حد‌‌ جور‌ و کرم سے بڑھ چلا حسن
نگاہ یار کو یاد آ رہا ہوں

جو الجھی تھی کبھی آدم کے ہاتھوں
وہ گتھی آج تک سلجھا رہا ہوں

محبت اب محبت ہو چلی ہے
تجھے کچھ بھولتا سا جا رہا ہوں

اجل بھی جن کو سن کر جھومتی ہے
وہ نغمے زندگی کے گا رہا ہوں

یہ سناٹا ہے میرے پاؤں کی چاپ
فراقؔ اپنی کچھ آہٹ پا رہا ہوں

 

 

جہان غنچۂ دل کا فقط چٹکنا تھا
اسی کی بوئے پریشاں وجود دنیا تھا

یہ کہہ کے کل کوئی بے اختیار روتا تھا
وہ اک نگاہ سہی کیوں کسی کو دیکھا تھا

طنابیں کوچۂ قاتل کی کھنچتی جاتی تھیں
شہید تیغ ادا میں بھی زور کتنا تھا

بس اک جھلک نظر آئی اڑے کلیم کے ہوش
بس اک نگاہ ہوئی خاک طور سینا تھا

ہر اک کے ہاتھ فقط غفلتیں تھیں ہوش نما
کہ اپنے آپ سے بیگانہ وار جینا تھا

یہی ہوا کہ فریب امید و یاس مٹے
وہ پا گئے ترے ہاتھوں ہمیں جو پانا تھا

چمن میں غنچۂ گل کھلکھلا کے مرجھائے
یہی وہ تھے جنہیں ہنس ہنس کے جان دینا تھا

نگاہ مہر میں جس کی ہیں صد پیام فنا
اسی کا عالم ایجاد و ناز بے جا تھا

جہاں تو جلوہ نما تھا لرزتی تھی دنیا
ترے جمال سے کیسا جلال پیدا تھا

حیات و مرگ کے کچھ راز کھل گئے ہوں گے
فسانۂ شب غم ورنہ دوستو کیا تھا

شب عدم کا فسانہ گداز شمع حیات
سوائے کیف فنا میرا ماجرا کیا تھا

کچھ ایسی بات نہ تھی تیرا دور ہو جانا
یہ اور بات کہ رہ رہ کے درد اٹھتا تھا

نہ پوچھ سود و زیاں کاروبار الفت کے
وگرنہ یوں تو نہ پانا تھا کچھ نہ کھوتا تھا

لگاوٹیں وہ ترے حسن بے نیاز کی آہ
میں تیری بزم سے جب ناامید اٹھا تھا

تجھے ہم اے دل درد آشنا کہاں ڈھونڈیں
ہم اپنے ہوش میں کب تھے کوئی جب اٹھا تھا

عدم کا راز صدائے شکست ساز حیات
حجاب زیست بھی کتنا لطیف پردا تھا

یہ اضطراب و سکوں بھی تھی اک فریب حیات
کہ اپنے حال سے بیگانہ وار جینا تھا

کہاں پہ چوک ہوئی تیرے بے قراروں سے
زمانہ دوسری کروٹ بدلنے والا تھا

یہ کوئی یاد ہے یہ بھی ہے کوئی محویت
ترے خیال میں تجھ کو بھی بھول جانا تھا

کہاں کی چوٹ ابھر آئی حسن تاباں میں
دم نظارہ وہ رخ درد سا چمکتا تھا

نہ پوچھ رمز و کنایات چشم ساقی کے
بس ایک حشر خموش انجمن میں برپا تھا

چمن چمن تھی گل داغ عشق سے ہستی
اسی کی نکہت برباد کا زمانہ تھا

وہ تھا مرا دل خوں گشتہ جس کے مٹنے سے
بہار باغ جناں تھی وجود دنیا تھا

قسم ہے بادہ کشو چشم مست ساقی کی
بتاؤ ہاتھ سے کیا جام مے سنبھلتا تھا

وصال اس سے میں چاہوں کہاں یہ دل میرا
یہ رو رہا ہوں کہ کیوں اس کو میں نے دیکھا تھا

امید یاس بنی یاس پھر امید بنی
اس اک نظر میں فریب نگاہ کتنا تھا

یہ سوز و ساز نہاں تھا وہ سوز و ساز عیاں
وصال و ہجر میں بس فرق تھا تو اتنا تھا

شکست ساز چمن تھی بہار لالہ و گل
خزاں مچلتی تھی غنچہ جہاں چٹکتا تھا

ہر ایک سانس ہے تجدید یاد ایامے
گزر گیا وہ زمانہ جسے گزرنا تھا

نہ کوئی وعدہ نہ کوئی یقیں نہ کوئی امید
مگر ہمیں تو ترا انتظار کرنا تھا

کسی کے صبر نے بے صبر دیا سب کو
فراقؔ نزع میں کروٹ کوئی بدلتا تھا

 

 

بہت پہلے سے ان قدموں کی آہٹ جان لیتے ہیں
تجھے اے زندگی ہم دور سے پہچان لیتے ہیں

مری نظریں بھی ایسے قاتلوں کا جان و ایماں ہیں
نگاہیں ملتے ہی جو جان اور ایمان لیتے ہیں

جسے کہتی ہے دنیا کامیابی وائے نادانی
اسے کن قیمتوں پر کامیاب انسان لیتے ہیں

نگاہ بادہ گوں یوں تو تری باتوں کا کیا کہنا
تری ہر بات لیکن احتیاطاً چھان لیتے ہیں

طبیعت اپنی گھبراتی ہے جب سنسان راتوں میں
ہم ایسے میں تری یادوں کی چادر تان لیتے ہیں

خود اپنا فیصلہ بھی عشق میں کافی نہیں ہوتا
اسے بھی کیسے کر گزریں جو دل میں ٹھان لیتے ہیں

حیات عشق کا اک اک نفس جام شہادت ہے
وہ جان ناز برداراں کوئی آسان لیتے ہیں

ہم آہنگی میں بھی اک چاشنی ہے اختلافوں کی
مری باتیں بعنوان دگر وہ مان لیتے ہیں

تری مقبولیت کی وجہ واحد تیری رمزیت
کہ اس کو مانتے ہی کب ہیں جس کو جان لیتے ہیں

اب اس کو کفر مانیں یا بلندیٔ نظر جانیں
خدائے دو جہاں کو دے کے ہم انسان لیتے ہیں

جسے صورت بتاتے ہیں پتہ دیتی ہے سیرت کا
عبارت دیکھ کر جس طرح معنی جان لیتے ہیں

تجھے گھاٹا نہ ہونے دیں گے کاروبار الفت میں
ہم اپنے سر ترا اے دوست ہر احسان لیتے ہیں

ہماری ہر نظر تجھ سے نئی سوگندھ کھاتی ہے
تو تیری ہر نظر سے ہم نیا پیمان لیتے ہیں

رفیق زندگی تھی اب انیس وقت آخر ہے
ترا اے موت ہم یہ دوسرا احسان لیتے ہیں

زمانہ واردات قلب سننے کو ترستا ہے
اسی سے تو سر آنکھوں پر مرا دیوان لیتے ہیں

فراقؔ اکثر بدل کر بھیس ملتا ہے کوئی کافر
کبھی ہم جان لیتے ہیں کبھی پہچان لیتے ہیں

 

 

دور آغاز جفا دل کا سہارا نکلا
حوصلہ کچھ نہ ہمارا نہ تمہارا نکلا

تیرا نام آتے ہی سکتے کا تھا عالم مجھ پر
جانے کس طرح یہ مذکور دوبارا نکلا

ہوش جاتا ہے جگر جاتا ہے دل جاتا ہے
پردے ہی پردے میں کیا تیرا اشارا نکلا

ہے ترے کشف و کرامات کی دنیا قائل
تجھ سے اے دل نہ مگر کام ہمارا نکلا

کتنے سفاک سر قتل گہہ عالم تھے
لاکھوں میں بس وہی اللہ کا پیارا نکلا

عبرت انگیز ہے کیا اس کی جواں مرگی بھی
ہائے وہ دل جو ہمارا نہ تمہارا نکلا

عشق کی لو سے فرشتوں کے بھی پر جلتے ہیں
رشک خورشید قیامت یہ شرارا نکلا

سر بہ سر بے سر و ساماں جسے سمجھے تھے وہ دل
رشک جمشید و کے و خسرو و دارا نکلا

عقل کی لو سے فرشتوں کے بھی پر جلتے ہیں
رشک خورشید قیامت یہ شرارا نکلا

رونے والے ہوئے چپ ہجر کی دنیا بدلی
شمع بے نور ہوئی صبح کا تارا نکلا

انگلیاں اٹھیں فراقؔ وطن آوارہ پر
آج جس سمت سے وہ درد کا مارا نکلا

 

 

آج بھی قافلۂ عشق رواں ہے کہ جو تھا
وہی میل اور وہی سنگ نشاں ہے کہ جو تھا

پھر ترا غم وہی رسوائے جہاں ہے کہ جو تھا
پھر فسانہ بحدیث دگراں ہے کہ جو تھا

منزلیں گرد کے مانند اڑی جاتی ہیں
وہی انداز جہان گزراں ہے کہ جو تھا

ظلمت و نور میں کچھ بھی نہ محبت کو ملا
آج تک ایک دھندلکے کا سماں ہے کہ جو تھا

یوں تو اس دور میں بے کیف سی ہے بزم حیات
ایک ہنگامہ سر رطل گراں ہے کہ جو تھا

لاکھ کر جور و ستم لاکھ کر احسان و کرم
تجھ پہ اے دوست وہی وہم و گماں ہے کہ جو تھا

آج پھر عشق دو عالم سے جدا ہوتا ہے
آستینوں میں لیے کون و مکاں ہے کہ جو تھا

عشق افسردہ نہیں آج بھی افسردہ بہت
وہی کم کم اثر سوز نہاں ہے کہ جو تھا

نظر آ جاتے ہیں تم کو تو بہت نازک بال
دل مرا کیا وہی اے شیشہ گراں ہے کہ جو تھا

جان دے بیٹھے تھے اک بار ہوس والے بھی
پھر وہی مرحلۂ سود و زیاں ہے کہ جو تھا

آج بھی صید گہ عشق میں حسن سفاک
لیے ابرو کی لچکتی سی کماں ہے کہ جو تھا

پھر تری چشم سخن سنج نے چھیڑی کوئی بات
وہی جادو ہے وہی حسن بیاں ہے کہ جو تھا

رات بھر حسن پر آئے بھی گئے سو سو رنگ
شام سے عشق ابھی تک نگراں ہے کہ جو تھا

جو بھی کر جور و ستم جو بھی کر احسان و کرم
تجھ پہ اے دوست وہی وہم و گماں ہے کہ جو تھا

آنکھ جھپکی کہ ادھر ختم ہوا روز وصال
پھر بھی اس دن پہ قیامت کا گماں ہے کہ جو تھا

قرب ہی کم ہے نہ دوری ہی زیادہ لیکن
آج وہ ربط کا احساس کہاں ہے کہ جو تھا

تیرہ بختی نہیں جاتی دل سوزاں کی فراقؔ
شمع کے سر پہ وہی آج دھواں ہے کہ جو تھا

 

 

Firaq Gorakhpuri Biography;

Faraq Gorakhpuri was born on August 28, 1896.You were a writer, writer, critic and poet.He was one of the foremost 20 century Urdu language poets.His real name was Raghupati Sahay. In modern poetry, if you look at the name of the firag,The effect of firag on today’s poetry can be easily felt his position is very high.He had a great personality.There was no one in his mind to match him. He was also interested in international literature. Romanticism in criticism.Among his contemporaries are poets like Allama Iqbal Faiz Ahmad Faiz Kefi Azmi Chingizi Jagar Murad Abadi and Sahir Ludhianvi.Despite the presence of such great personalities, he had mastered the art of poetry at an early age.Vacant PCSIRS was selected for the Indian Civil Service. But he resigned in protest of Gandhiji’s non-cooperation movement, for which he had to go to jail.After that, English language elections were held at Allahabad University. From here, the world wanted to shine like the sun in the sky of poetry and literature, but the contemporaries had to believe that there is a difference between the poetry of Firag and other poets.There is a uniqueness in him due to which he established himself as a poet.Her husband’s book Gul Naghma also came to light at the same time.

He was awarded the highest quality literary award of India and was also the producer of All India Radio.He compiled more than a dozen volumes of Urdu poetry and more than half a dozen volumes of Urdu prose and wrote several volumes on Hindi literary genres as well as four books on English literature and culture.firag passed away on March 3, 1982 at the age of 85 in New Delhi after a long illness. The body was taken to Allahabad where it was cremated at the confluence of Ganga and Jumna rivers.If we talk about Firag Gorakhpuri’s songs, neither Gul Rana nor Naat Ruh found life before Pakistan.

The rewards they receive, so to speak
1960 – Sahitya Akademi Award in Urdu
1968 – Padma Bhushan
1968 – Soviet Land Nehru Award
1969 – Jnanpith Award (First Jnanpith Award for Urdu literature)
1970 – Sahitya Akademi Fellowship
1981 – Ghalib Academy Award

 

Continue Reading

Urdu Poets

Ada Jafri Poetry and Shayari Poems, Ghazal. Nazam in Urdu & Hindi

ada shayari rekhta

Ada Jafri Poetry and Shayari in Urdu & Hindi available. We have lots of collection Best Ada Jafri Poetry on Sad and life. Pakistani feminist poets Poetry copy and paste share on social media..  ada shayari rekhta, Ghazal , Nazam, poems , Kavita, Romantic & Sad Poetry for whats app and Facebook status. 2 line and 4 line Poetry of Ada download with images Shayari.

Ada Jafri Sms Poetry quotes and status uplode on social media. Find Here latest collection ada shayari rekhta of Urdu poet. Our team daily update all type of poet shayari in this site. You can find your favorite Ada Jafri poetry on this site and share it with your loved ones.We hope you enjoyed our collection. If you liked Ada Jafri Shayari Collection, please let us know by commenting below.

 

Ada Jafri Poetry in Urdu

 

ada shayari rekhta

ada shayari rekhta

 

ہونٹوں پہ کبھی ان کے مرا نام ہی آئے
آئے تو سہی بر سر الزام ہی آئے

 

 

گھر کا رستہ بھی ملا تھا شاید
راہ میں سنگ وفا تھا شاید

 

 

 

 

na bahlawa na samjhaùta jùdai si jùdai hai
‘ada’ sÒchÒ tÒ KHùshbù ka safar aasan nahin hÒta

 

 

 

 

جب دل کی رہ گزر پہ ترا نقش پا نہ تھا
جینے کی آرزو تھی مگر حوصلہ نہ تھا

 

 

 

main aandhiyÒn ke pas talash-e-saba mein hùn
tùm mùjh se pùchhte hÒ mera haùsla hai kya

 

 

 

 

 

جو چراغ سارے بجھا چکے انہیں انتظار کہاں رہا
یہ سکوں کا دور شدید ہے کوئی بے قرار کہاں رہا

 

 

اچانک دل ربا موسم کا دل آزار ہو جانا
دعا آساں نہیں رہنا سخن دشوار ہو جانا

 

 

 

main aandhiyÒn ke pas talash-e-saba mein hùn
tùm mùjh se pùchhte hÒ mera haùsla hai kya

 

 

 

 

 

اجالا دے چراغ رہ گزر آساں نہیں ہوتا
ہمیشہ ہو ستارا ہم سفر آساں نہیں ہوتا

Ada Jafri Poetry in Hindi

 

ada jafri poetry in hindi

ada jafri poetry in hindi

 

kÒi tair idhar nahin aata
kaisi taqsir is makan se hùi

 

 

lÒg be-mehr na hÒte hÒnge
wahm sa dil kÒ hùa tha shayad

 

 

KHamùshi se hùi fùghan se hùi
ibtida ranj ki kahan se hùi

 

 

 

kaTta kahan tawil tha raatÒn ka silsila
sùraj meri nigah ki sachchaiyÒn mein tha

 

 

 

jÒ dil mein thi nigah si nigah mein kiran si thi
wÒ dastan ùlajh gai wazahatÒn ke darmiyan

 

 

 

kanTa sa jÒ chùbha tha wÒ laù de gaya hai kya
ghùlta hùa lahù mein ye KHùrshid sa hai kya

 

 

jÒ charagh sare bùjha chùke ùnhen intizar kahan raha
ye sùkùn ka daùr-e-shadid hai kÒi be-qarar kahan raha

 

 

 

jis ki jaanib ‘ada’ nazar na ùThi
haal ùs ka bhi mere haal sa tha

 

 

hÒnTÒn pe kabhi ùn ke mera nam hi aae
aae tÒ sahi bar-sar-e-ilzam hi aae

 

 

 

jis ki baatÒn ke fasane likkhe
ùs ne tÒ kùchh na kaha tha shayad

 

 

 

hamare shahr ke lÒgÒn ka ab ahwal itna hai
kabhi aKHbar paDh lena kabhi aKHbar hÒ jaana

 

 

 

gùl par kya kùchh bit gai hai
albela jhÒnka kya jaane

 

dil ke virane mein ghùme tÒ bhaTak jaÒge
raùnaq-e-kùcha-Ò-bazar se aage na baDhÒ

Ada shayari rekhta

 

 

ek aaina rù-ba-rù hai abhi
ùs ki KHùshbù se gùftùgù hai abhi

 

bÒlte hain dilÒn ke sannaTe
shÒr sa ye jÒ chaar-sù hai abhi

 

 

bas ek bar manaya tha jashn-e-mahrùmi
phir ùs ke baad kÒi ibtila nahin aai

 

 

 

agar sach itna zalim hai tÒ hùm se jhùT hi bÒlÒ
hamein aata hai patjhaD ke dinÒn gùl-bar hÒ jaana

 

 

baDe taban baDe raùshan sitare TùT jate hain
sahar ki rah takna ta sahar aasan nahin hÒta

 

 

 

abhi sahifa-e-jaan par raqam bhi kya hÒga
abhi tÒ yaad bhi be-saKHta nahin aai

aa dekh ki mere aansùÒn mein
ye kis ka jamal aa gaya hai

Ada Jafri Ghazal

 

ada jafri ghazal tashreeh

ada jafri ghazal tashreeh

 

hirè moti lal jawahar rolè bhar bhar thaali

apna kisa apna daman apni jholi KHali

apna kasa para para apna garèban chaak

chaak garèban walè logo tum kaisè gun walè ho

kanTon sè talwè zaKHmi hain ruh thakan sè chur

kuchè kuchè KHushbu bikhri apnè ghar sè dur

apna aangan suna suna apna dil viran

phulon kaliyon kè rakhwalo tum kaisè gun walè ho

tufanon sè Takkar lè li jab thamè patwar

pyar kè natè jis kashti kè lakhon khèwan-haar

sahil sahil shahr basaè sagar sagar dhum

manjhi apni nagri bholè tum kaisè gun walè ho

aankhon kirnèn mathè suraj aur kuTiya andhiyari

kaisè likh luT raja ho tum samjhèn log bhikari

shisha sachcha ujla jab tak uncha us ka bhaw

apna mol na jaana tum nè kaisè gun walè ho

jin khèton ka rang nikhaarè jalti tapti dhup

sawan ki phuwarèn bhi chahèn in khèton ka rup

tum ko kya ghaTa dil walo

tum jo sachchè ho gun walè ho

 

 

 

 

 

 

 

èk din

tum nè mujh sè kaha tha

dhup kaDi hai

apna saya sath hi rakhna

waqt kè tarkash mèin jo tir thè khul kar barsè hain

zard hawa kè pathrilè jhonkon sè

jism ka panchhi ghayal hai

dhup ka jangal pyas ka dariya

aisè mèin aansu ki èk èk bund ko

insan tarsè hain

tum nè mujh sè kaha tha

samay ki bahti naddi mèin

lamhè ki pahchan bhi rakhna

mèrè dil mèin jhank kè dèkho

dèkho saton rang ka phul khila hai

wo lamha jo mèra tha wo mèra hai

waqt kè paikan bè-shak tan par aan lagè

dèkho us lamhè sè kitna gahra rishta hai

 

 

 

 

Ada Jafari Biografy;

Dear listeners, there are many deaths in the field of Urdu literature, but none other than Ada Jafari, the first lady of Urdu poetry.There is no doubt that Ada Jafari has been an invaluable investment in Urdu poetry.Ada Jafri was his real name. His pen name was Aziz Jahan.His pen name was Aziz Jahan. Ada Jafaria was born on August 22, 1924 in the family of Molly Al Hassan.But unfortunately, he did not get the shadow of his father for a long time.Her father died when she was 3 years old. She started writing poetry at an early age.At an early age, his Urdu literature began to be published.She married Noorul Hassan Jafari at the age of 30, after which she started writing regularly under the name of Ada Jafari. Ada Jafari The greatest movement of Urdu literature in the field of Urdu poetry appeared along with the progressive writers of the organization and soon made a home in the hearts of people like Faiz Ahmed Faiz thanks to his extraordinary creativity.

Ada Jafari The greatest movements of Urdu literature appeared on the horizon of Urdu poetry along with the organization of progressive writers and soon his extraordinary freedom sticker made his poetry not only life but also a nation.He used his pseudonym as a founding member of the era. His new word aesthetics and the charming kind that would appear in Ada Badawi’s poetry were not present here.That is why he has been called an actor of rebellion against the system of military life. His voice is clear and his protest.Without which there is no prohibition.Ada Jafari’s new ghazal Nawa Ghazals “Tum Waqif Ho” “HARF Shansai” etc. Published in 2009 under the title Weather.died in the evening of 12 March 2015 in a hospital in Karachi where she was being treated, at the age of 90.

 

Continue Reading

Trending