Mirza Muhammad Rafi Sauda poetry in Urdu | Sauda Ghazal, Qaseda,

Mirza Muhammad Rafi Sauda poetry in Urdu. Latest collection sauda shayari, Ghazal, Nazam, Qaseda, in Urdu and Hindi available. You can share Sauda poetry on social media like Facebook and whats app. Here all kind of poets poetry available in Urdu. We hop yo like Rafi Sauda poetry in Urdu.

 

Mirza Muhammad Rafi Sauda poetry in Urdu.

 

 

mirza muhammad rafi sauda poetry

mirza muhammad rafi sauda poetry

 

 

گر تجھ میں ہے وفا تو جفاکار کون ہے
دل دار تو ہوا تو دل آزار کون ہے
مرزا محمد رفیع سودا

Gar Tujh Men Hai Vafa Tò Jafakar Kaun Hai
Dil-Dar Tu Hua Tò Dil-Azar Kaun Hai
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

میں نے تم کو دل دیا اور تم نے مجھے رسوا کیا
میں نے تم سے کیا کیا اور تم نے مجھ سے کیا کیا
مرزا محمد رفیع سودا

Main Ne Tum Kò Dil Diya Aur Tum Ne Mujhe Rusva Kiya
Main Ne Tum Se Kya Kiya Aur Tum Ne Mujh Se Kya Kiya

 

سوداؔ خدا کے واسطے کر قصہ مختصر
اپنی تو نیند اڑ گئی تیرے فسانے میں
مرزا محمد رفیع سودا

‘Sauda‘ Khuda Ke Vaste Kar Qissa Mukhtasar
Apni Tò Niind Ud Gai Tere Fasane Men
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

Mirza Rafi Sauda ka taruf

Mirza Rafi Sauda ka taruf

سوداؔ تو اس غزل کو غزل در غزل ہی کہہ
ہونا ہے تجھ کو میرؔ سے استاد کی طرف
مرزا محمد رفیع سودا

‘Sauda‘ Tu Is Ghazal Kò Ghazal-Dar-Ghazal Hi Kah
Hòna Hai Tujh Kò ‘Mir‘ Se Ustad Ki Taraf
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

ہے مدتوں سے خانۂ زنجیر بے صدا
معلوم ہی نہیں کہ دوانے کدھر گئے
مرزا محمد رفیع سودا

Hai Muddatòn Se Khana-e-Zanjir Be-Sada
Maalum Hi Nahin Ki Divane Kidhar Gae
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

دل مت ٹپک نظر سے کہ پایا نہ جائے گا
جوں اشک پھر زمیں سے اٹھایا نہ جائے گا
مرزا محمد رفیع سودا

 

Dil Mat Tapak Nazar Se Ki Paaya Na Jaega
Juun Ashk Phir Zamin Se Uthaya Na Jaega
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

 

گلہ لکھوں میں اگر تیری بے وفائی کا
لہو میں غرق سفینہ ہو آشنائی کا
مرزا محمد رفیع سودا

Gila Likhun Main Agar Teri Bevafai Ka
Lahu Men Gharq Safina Hò Ashnai Ka
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

sauda ki ghazal

sauda ki ghazal

 

نسیم ہے ترے کوچے میں اور صبا بھی ہے
ہماری خاک سے دیکھو تو کچھ رہا بھی ہے
مرزا محمد رفیع سودا

Nasim Hai Tire Kuche Men Aur Saba Bhi Hai
Hamari Khaak Se Dekhò Tò Kuchh Raha Bhi Hai
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

سمجھے تھے ہم جو دوست تجھے اے میاں غلط
تیرا نہیں ہے جرم ہمارا گماں غلط
مرزا محمد رفیع سودا

Samjhe The Ham Jò Dòst Tujhe Ai Miyan Ghalat
Tera Nahin Hai Jurm Hamara Guman Ghalat
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

سوداؔ جو ترا حال ہے اتنا تو نہیں وہ
کیا جانیے تو نے اسے کس آن میں دیکھا
مرزا محمد رفیع سودا

‘Sauda‘ Jò Tira Haal Hai Itna Tò Nahin Vò
Kya Janiye Tu ne Use Kis Aan Men Dekha
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

Sauda ki qasida nigari in Urdu

Sauda ki qasida nigari in Urdu

 

سوداؔ جو بے خبر ہے وہی یاں کرے ہے عیش
مشکل بہت ہے ان کو جو رکھتے ہیں آگہی
مرزا محمد رفیع سودا

‘Sauda‘ Jò Be-Khabar Hai Vahi Yaan Kare Hai Aish
Mushkil Bahut Hai Un Kò Jò Rakhte Hain Agahi
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

جس روز کسی اور پہ بیداد کرو گے
یہ یاد رہے ہم کو بہت یاد کرو گے
مرزا محمد رفیع سودا
Jis Ròz Kisi Aur Pe Bedad Karòge
Ye Yaad Rahe Ham Kò Bahut Yaad Karòge
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

ساقی ہماری توبہ تجھ پر ہے کیوں گوارہ
منت نہیں تو ظالم ترغیب یا اشارہ
مرزا محمد رفیع سودا

Saaqi Hamari Tauba Tujh Par Hai Kyuun Gavara
Minnat Nahin Tò Zalim Targhib Ya Ishara
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

Sauda rekhta

Sauda rekhta

موج نسیم آج ہے آلودہ گرد سے
دل خاک ہو گیا ہے کسی بے قرار کا
مرزا محمد رفیع سودا

 

Mauj-e-Nasim Aaj Hai Aluda Gard Se
Dil Khaak Hò Gaya Hai Kisi Be-Qarar Ka
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

 

فراق خلد سے گندم ہے سینہ چاک اب تک
الٰہی ہو نہ وطن سے کوئی غریب جدا
مرزا محمد رفیع سودا
Firaq-e-Khuld Se Gandum Hai Sina-Chak Ab Tak
Ilahi Hò Na Vatan Se Kòi Gharib Juda
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

عبث تو گھر بساتا ہے مری آنکھوں میں اے پیارے
کسی نے آج تک دیکھا بھی ہے پانی پہ گھر ٹھہرا
مرزا محمد رفیع سودا

Abas Tu Ghar Basata Hai Miri Ankhòn Men Ai Pyare
Kisi Ne Aaj Tak Dekha Bhi Hai Paani Pe Ghar Thahra
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

 

 

 

ہر سنگ میں شرار ہے تیرے ظہور کا
موسیٰ نہیں جو سیر کروں کوہ طور کا
مرزا محمد رفیع سودا

Har Sang Men Sharar Hai Tere Zuhur Ka
Muusa Nahin Jò Sair Karun Kòh Tuur Ka
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

 

بدلا ترے ستم کا کوئی تجھ سے کیا کرے
اپنا ہی تو فریفتہ ہووے خدا کرے
مرزا محمد رفیع سودا

Badla Tire Sitam Ka Kòi Tujh Se Kya Kare
Apna Hi Tu Farefta Hòve Khuda Kare
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

 

 

دل کے ٹکڑوں کو بغل گیر لئے پھرتا ہوں
کچھ علاج اس کا بھی اے شیشہ گراں ہے کہ نہیں
مرزا محمد رفیع سودا

Dil Ke Tukròn Kò Baġhal-Gir Liye Phirta Huun
Kuchh Ilaaj Is Ka Bhi Ai Shisha-Giran Hai Ki Nahin
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

 

 

کہیو صبا سلام ہمارا بہار سے
ہم تو چمن کو چھوڑ کے سوئے قفس چلے
مرزا محمد رفیع سودا
Kahiyò Saba Salam Hamara Bahar Se
Ham Tò Chaman Kò Chhòd Ke Su-e-Qafas Chale
Mirza Muhammad Rafi Sauda

 

 

 

Sauda Shayari

 

 

Mat Pòch Ye Ke Raat Kati Kun Kr Tujh Baghair
Is Guftagu Se Faida Payare Guzar Gayi

 

 

 

 

 

Main Ne Tum Kò Dil Diya Aur Tum Ne Mujhe Ruswa Kiya
Mein Ne Tum Se Kya Kia Aur Tum Ne Mujh Se Kya Kia

 

 

 

 

Tera Khat Aane Se Dil Kò Mere Aaram Kya Hò Ga
Khuda Jane Keh Is Aaghaz Ka Anjam Kya Hò Ga

 

 

 

 

Adam Ka Jisam Jab Ke Anasar Se Mil Bana
Kuch Aag Bach Rahi Thi Sò Aashiq Ka Dil Bana

 

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*